Download

یوم جمہوریہ کی تقریبات :جموں اور سرینگر میں حفاظت کے غیر معمولی انتظامات

سرینگر میں شبانہ گشت بڑھا ، رات میں ہائی سیکورٹی کیسپر گاڑیاںشہر کی سڑکوں پر
ر یپبلک ڈے کے پیش نظر حفاظت کے پختہ انتظامات کئے گئے اور ہر زاوئے پر ہماری نظر ۔ اے ڈی جی پی

سرینگر//جمہوریہ کے پیش نظر سرینگر کے ساتھ ساتھ جموں شہر میں سختی بڑھا دی گئی ہے۔ ڈرون کے ذریعے شہر کے ہر کونے کی نگرانی کی جا رہی ہے۔ رات کے اوقات میں فوج کی کیسپر گاڑیوں کو سرینگر کے مختلف علاقوںمیںگشت کرتے دیکھا گیا ہے خاص کرلالچوک سے ڈلگیٹ اور دیگر جگہوں کے علاوہ سٹیڈیم کے راستوں پر کیسپر گاڑیوں کا گشت بڑھایا گیا ہے ۔ادھر سرکاری ذرائع نے بتایا ہے کہ سرینگر کے بخشی سٹیڈیم جہاں پر وادی کی سب سے بڑی تقریب منعقد ہوگی جہاں پر ایل جی کے مشیر آر آ ر بھٹناگر پریڈ پر سلامی لیں گے اور جموں کے مولانا آزاد سٹیڈیم جہاں پر سب سے بڑی تقریب منعقد ہورہی ہے اور یہاں پر لیفٹیننٹ گورنر پریڈ پر سلامی لیں گے کو فورسز کی تحویل میں دے دیا گیا ہے تاکہ کسی بھی امکانی گڑ بڑھ کی کوشش کو ناکام بنایا جاسکے ۔ اس دوران سرینگر اور جموں کے حساس علاقوں میں فورسز اور پولیس کی اضافی نفری تعینات کی گئی ہے جبکہ تقریبات منعقد ہونے کی جگہوں کے گرد ڈرون کے ذریعے نگرانی کی جارہی ہے ۔ادھر پولیس کے نائب سربراہ نے بتایا کہ یوم جمہوریہ کے پیش نظر دونوں صوبوں میں حفاظت کے پختہ انتظامات کئے گئے ہیں اور گشت کو بڑھایا گیا ہے ۔ا نہوںنے بتایا کہ پولیس اور فورسز کی اضافی نفری کو تعینات کیا گیا ہے اور اگلے دو دنوں تک سخت نگرانی کو یقینی بنایا گیا ہے ۔بھارتی یوم جمہوریہ کے پیش نظر سیکورٹی ایجنسیاں چوکس ہیں۔فورسز اورپولیس کی جانب سے تقریبات کے دوران نگرانی کاعمل وسیع کیا جارہا ہے جبکہ کسی بھی امکانی گڑ بڑھ کے پیش نظر سرینگر اور جموں کے شہروں میں ڈرون کے نگرانی شروع کی گئی ہے ۔ سرکاری ذرائع کے مطابق سرینگر کے بخشی سٹیڈیم اور جموں کا مولانا آزاد سٹیڈیم جہاں سب سے بڑی تقریب منعقد ہوگی اور جموں کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا تقریب پرمہمان خصوصی ہوں گے اور پریڈ پر سلامی لیں گے جبکہ بخشی سٹیڈیم سرینگر میں ایل جی کے مشیر بھٹناگر پریڈ پر سلامی لیں گے اور دونوں سٹیڈیموں کو حفاظت کے کڑے حصار میں رکھا گیا ہے اس کے ساتھ ہی شہر میں سختی بڑھا دی گئی ہے۔ ڈرون کے ذریعے شہر کے ہر کونے کی نگرانی کی جا رہی ہے۔ اہم مقامات کی سیکیورٹی کے لیے سیکیورٹی فورسز اور ایم اے اسٹیڈیم کی ذمہ داری ایس او جی کو دی گئی ہے۔سرینگر اور جموں میں گاڑیوں ، آٹو رکھشائوں اور موٹر سائکلوں کی چیکنگ کا سلسلہ جاری ہے۔ ہر گاڑی کو ناکوں پر چیکنگ کے بعد ہی آگے جانے کی اجازت دی گئی۔ اس کے ساتھ راہگیروں کو بھی پوچھ گچھ کے دائرے میں لایا جارہا ہے ۔محلوں، فلائی اوورزاور شہروں میں مانیٹرنگ کی جا رہی ہے۔ رات بھر موبائل گاڑیوں کی نگرانی کی جا رہی ہے۔ اس وقت متعدد مقامات پرناکے لگائے گئے ہیں۔بخشی سٹیڈیم سرینگر اور جموں کے ایم اے سٹیڈیم کے باہر غیر ضروری طور پر کھڑے ہونے کی اجازت نہیں ہے۔جبکہ جموں کے سٹیڈیم میں دن کے آخر میں پولیس پریڈ کے لیے ریہرسل جاری ہیں۔ دریں اثناء سرینگر شہر میں شبانہ حفاظتی انتظامات بڑھائے گئے ہیں ۔ رات کے اوقات میں فوج کی کیسپر گاڑیوں کو سرینگر کے مختلف علاقوںمیںگشت کرتے دیکھا گیا ہے خاص کرلالچوک سے ڈلگیٹ اور دیگر جگہوں کے علاوہ سٹیڈیم کے راستوں پر کیسپر گاڑیوں کا گشت بڑھایا گیا ہے ۔دریں اثناء اے ڈی جی پی وجے کمارنے نامہ نگاروں کو بتایاکہ ہم نے اقدامات کیے ہیں اور حفاظتی انتظامات کے حوالے سے میٹنگیں ہوئی ہیں کچھ کیمپوں کو منتقل کیا جا رہا ہے، نئے کیمپ بھی قائم کیے جا رہے ہیں۔اے ڈی جی پی نے کہا، ’’ہم فورسز کی گشت میں اضافہ کر رہے ہیں اور آنے والے دنوں میں کارروائیوں کو تیز کیا جائے گا۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ہم کسی بھی ممکنہ دہشت گردی یا فرقہ وارانہ واقعے کو ناکام بنانے کے لیے گزشتہ دو دنوں سے تیاری کر رہے ہیں۔ ہم دونوں پہلوؤں کو ذہن میں رکھے ہوئے ہیں۔ادھرڈائرکٹر جنرل آف پولیس (ڈی جی پی) آر آر سوین نے ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ میں حفاظتی اقدامات کا جائزہ لیااور یوم جمہوریہ کی تقریب کو احسن طریقے سے منعقد کرنے کیلئے ہر ممکن حفاظتی اقدامات کرنے کی ہدایت دی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں