Download (8)

کوئی بھی ہمارے فوجیوں کو حقیر نظر سے دیکھنے کو برداشت نہیں کر سکتا:وزیر دفاع

ہندوستانی فوج پہلے کے مقابلے میں کافی لیس ہو چکی ہے۔
ملک کی حفاظت کے ساتھ ساتھ اہل وطن کے دل جیتنا بھی آپ کے کندھوں پر بڑی ذمہ داری: راجنتاتھ سنگھ

سرینگر // پونچھ میں فوج کی گاڑیوں پر دہشت گردانہ حملے کے تقریباً ایک ہفتہ بعد، جس میں چار جوان مارے گئے تھے، وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ بدھ کو راجوری پہنچے اور سیکورٹی کا جائزہ لیا اور کہا کہ ہر فوجی کو ہمارے لیے بہت اہم ہے اور ہر سپاہی خاندان کے ایک فرد کی طرح ہوتا ہے اور ہم یہ برداشت نہیں کر سکتے کہ کوئی بھی اپنے فوجیوں اور ہم وطنوں کو حقیر نظر سے دیکھے۔ انہوں نے کہاکہ”میں زخمی ہونے والے اپنے فوجیوں کی جلد صحت یابی کی خواہش کرتا ہوں۔ میں آپ کو یقین دلانا چاہتا ہوں کہ زخمی ہونے والے تمام فوجیوں کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے تمام ضروری اقدامات اٹھانے کی ہر ممکن کوشش کی جا رہی ہے اور ان کی بھلائی کے لیے تمام ضروری اقدامات اٹھانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی جا رہی ہے۔ ہر سپاہی ہمارے لیے بہت اہم ہے۔ مجھے یقین ہے کہ ہمارا ہر سپاہی خاندان کے ایک فرد کی طرح ہے۔ یہ احساس ہم سب کے اندر رہتا ہے۔ یہ احساس ہر ملک کے اندر بستا ہے۔ ہم یہ برداشت نہیں کر سکتے کہ کوئی ہمارے فوجیوں اور ہم وطنوں کو حقیر نظر سے دیکھے،‘سیکیورٹی اور انٹیلی جنس ایجنسیاں دونوں اہم کردار ادا کرتی ہیں اور یہ کوشش ان کی طرف سے بھی مسلسل جاری ہے۔ یہ کردار مستقبل میں مزید اہم ہو گا۔ حکومت سے جو بھی تعاون درکار ہے اور مستقبل میں حکومت سے جو بھی تعاون درکار ہوگا، ہمارا خزانہ مکمل طور پر کھلا ہے،‘‘ وزیر دفاع نے مزید کہا۔اس ہفتے کے شروع میں راجوری انکاؤنٹر پر بات کرتے ہوئے، راجناتھ سنگھ نے کہا، “میرا ماننا ہے کہ اس طرح کے واقعات کو معمولی نہیں سمجھنا چاہیے۔ ہمیں مزید چوکس رہنے کی ضرورت ہے۔ میں جانتا ہوں کہ آپ سب چوکس رہیں۔راجناتھ سنگھ نے سیکورٹی اہلکاروں کی حوصلہ افزائی کی اور کہا کہ ان کے فرائض اور کوششوں کا معاوضے سے موازنہ نہیں کیا جا سکتا۔آپ سب میں قوم کے لیے قربانی کا جذبہ ہے۔ آپ جس بہادری اور بہادری کا مظاہرہ کرتے ہیں اس کی وجہ سے ہم سب کو بھی فخر کا احساس ہوتا ہے۔ مادر وطن کی خدمت میں آپ کی جتنی بھی قربانی ہو، آپ کے فرائض اور کاوشوں کا کسی بھی حال میں موازنہ نہیں کیا جا سکتا۔ یہاں تک کہ اگر کچھ معاوضہ دیا جاتا ہے، یہ فوجیوں کی قربانی کا معاوضہ نہیں دے گا، “راجناتھ سنگھ نے کہامیں آپ کو یقین دلانا چاہتا ہوں کہ جہاں تک حکومت کا تعلق ہے، حکومت آپ کے ساتھ کھڑی ہے اور ہم آپ کی فلاح و بہبود اور آپ کی سہولت کو یکساں ترجیح دیتے ہیں۔ ہم جو بھی معلومات فراہم کرتے ہیں اس کی بنیاد پر اقدامات کرنے کی کوشش کرتے ہیں،’’ وزیر نے کہا۔راجناتھ سنگھ نے کہا کہ ہندوستانی فوج پہلے کے مقابلے میں کافی لیس ہو چکی ہے۔ہندوستانی فوج کے بارے میں بات کرتے ہوئے راج ناتھ سنگھ نے کہا، “ہندوستانی فوج اب پہلے سے کہیں زیادہ طاقتور ہوگئی ہے۔ ہندوستانی فوج پہلے کے مقابلے کافی لیس ہو چکی ہے۔ آپ سب اس ملک کے محافظ ہیں۔ ملک کی حفاظت کے ساتھ ساتھ میں آپ سے ایک خصوصی درخواست کرنا چاہتا ہوں۔ ملک کی حفاظت کی ذمہ داری آپ پر عائد ہوتی ہے لیکن ملک کی حفاظت کے ساتھ ساتھ اہل وطن کے دل جیتنا بھی آپ کے کندھوں پر بڑی ذمہ داری ہے۔ آپ جس ملک کی خدمت کر رہے ہیں ان کے ساتھ قریبی جڑے رہیںمجھے یقین ہے کہ ہمارا مقصد جنگ جیتنا ہے۔ جب کہ ہمارا مقصد دہشت گردوں کو ختم کرنا ہے، ہمارا مقصد بڑا ہونا چاہیے۔ ہمیں اپنے ہم وطنوں کے دل جیتنے ہیں۔ ہم جنگ جیتیں گے، ہم کسی بھی قسم کی جنگ جیتیں گے، اور دہشت گردوں کا قلع قمع کریں گے لیکن اس کے ساتھ ساتھ ہم نے اہل وطن کے دل جیتنے ہیں اور بہت بڑی ذمہ داری آپ سب کے کندھوں پر ہے اور میں جانتا ہوں۔ بہت اچھا ہے کہ آپ اسے مکمل طور پر پورا کریں گے. ہم اسے پوری لگن کے ساتھ پورا کرنے کی پوری کوشش کرتے ہیں۔ دْعا ہے کہ آپ ہمت، غیرت اور اپنی اقدار کی اٹل پابندی کے ساتھ خدمت کرتے رہیں،‘‘ راجناتھ سنگھ نے مزید کہا۔اس سے قبل، گزشتہ ہفتے جمعرات کو راجوری سیکٹر میں تھانامنڈی کے قریب بھاری ہتھیاروں سے لیس دہشت گردوں نے فوج کی دو گاڑیوں پر گھات لگا کر حملہ کیا تھا جس کے بعد فوج کے چار اہلکار ہلاک اور تین دیگر زخمی ہو گئے تھے۔ذرائع نے پیر کو بتایا کہ اپنے فوجیوں پر حملوں میں حالیہ اضافے کے درمیان، ہندوستانی فوج پونچھ-راجوری سیکٹر میں پاکستانی دہشت گردوں کی سرگرمیوں کو روکنے کے لیے فوجیوں کی تعداد بڑھانے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔کچھ مہینے پہلے ایک اضافی بریگیڈ سائز کا فارمیشن اس علاقے میں منتقل کیا گیا تھا۔ یہ منصوبہ بنایا گیا ہے کہ ایک اور بریگیڈ کچھ دیگر یونٹوں کے ساتھ انسداد دہشت گردی کی کارروائیوں میں مدد کے لیے آئے گی،‘‘ فوج کے ذرائع نے اے این آئی کو بتایا۔توقع ہے کہ اس اقدام سے علاقے میں انسداد دہشت گردی کے گرڈ کو تقویت ملے گی اور مقامی آبادی کے اعتماد میں اضافہ ہوگا۔مقامی پولیس نے بھی اپنے انٹیلی جنس نیٹ ورک کو مضبوط کیا ہے اور امید کی جا رہی ہے کہ اس میں مزید اضافہ ہو گا۔فوج 13 سیکٹر کے راشٹریہ رائفلز کے کمانڈر کے خلاف اسٹاف کورٹ آف انکوائری بھی کر رہی ہے، جو ایک بریگیڈیئر ہیں، ان کارروائیوں میں بار بار ہونے والی غلطیوں کے لیے جن میں فوج نے بہت سے فوجیوں کو کھو دیا ہے۔اسٹاف کورٹ آف انکوائری کی سربراہی ایک میجر جنرل رینک کے افسر کررہے ہیں جو تین شہریوں کی ہلاکت کی ذمہ داری بھی قبول کرے گا جنہیں ڈیرہ کی گلی دہشت گردانہ حملے کے فوراً بعد ۸۴ آر آر فوجیوں نے حراست میں لیا تھا، جس میں چار فوجی اہلکار تھے۔ مارے گئے اور ان کی لاشیں بھی مسخ کر دی گئیں۔ہندوستانی فوج کے سربراہ جنرل منوج پانڈے نے بھی آج پونچھ-راجوری سیکٹر کا دورہ کیا اور توقع ہے کہ وہ اس ہفتے وزارت دفاع کے سینئر عہدیداروں کے ساتھ دوبارہ دورہ کریں گے۔دورے کے دوران انہیں اعلیٰ کمانڈروں نے موجودہ آپریشنز اور آنے والے دنوں میں دہشت گردوں کو مؤثر طریقے سے نشانہ بنانے کے لیے کیے جانے والے اقدامات کے بارے میں بریفنگ دی۔ذرائع نے بتایا کہ پاکستانی فوج اور اس کی انٹیلی جنس ایجنسیاں پونچھ راجوری سیکٹر میں دہشت گردی کو بحال کرنا چاہتی ہیں تاکہ ہندوستانی فوج پر چین کے ساتھ شمالی سرحد پر فوجیوں کو کم کرنے کے لیے دباؤ ڈالا جا سکے۔ سیکورٹی فورسز وادی کشمیر میں دہشت گردانہ سرگرمیوں کو بھی کم کرنے میں کامیاب ہو گئی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں