Download (16)

چلڈرن اسپتال بمنہ سرینگر کے باہر اور فٹ برج نہ ہونے سے مریض و تیمار دار پریشان

مریضوں اور تیمار داروں کیلئے کراسنگ نہ ہونے سے انسانی جانو ں کو خطرہ لاحق

سرینگر// سرینگر کے بمنہ علاقے میں قائم 500 بستروں پر مشتمل چلڈرن اسپتال کے باہر کراسنگ اور اوور فٹ برج کی عدم موجودگی میں مریضوں کے ساتھ ساتھ ان کے تیمار داروں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے اور انہوں نے حکام سے اس معاملے میں مداخلت کی اپیل کی ہے ۔ سٹار نیوز نیٹ ورک ( ایس این این ) کو اس ضمن میں نمائندے نے تفصیلا ت فراہم کرتے ہوئے بتایا کہ بمنہ سرینگر کے چلڈرن اسپتال کے باہر فٹ برج اور روڑ کو کراس کرنے کی کوئی سہولیات بھی نہیں ہے جس کے نتیجے میں مریضوں اور ان کے تیمار داروں کو کافی دور تک جانا پڑتا ہے ۔ مختلف علاقوں سے تعلق رکھنے والے مریضوںنے بتایا کہ ہسپتال کے باہر اوور ہیڈ فٹ برج اور زیبرا کراسنگ نہ ہونے کی وجہ سے پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اسپتال کے آس پاس کوئی میڈیکل شاپ نہیں ہے اور تیمارداروں کو ادویات کیلئے سکمز اسپتال بمنہ کے قریب جانے پر مجبور ہیں۔ایک تیماردار نے بتایا کہ اوور ہیڈ فٹ برج اور زیبرا کراسنگ نہ ہونے کی وجہ سے لوگ بہت زیادہ ٹریفک کے درمیان سڑک عبور کرنے پر مجبور ہیں، جس سے ان کی جان کو خطرہ لاحق ہے۔اس کے علاوہ، ہسپتال میں مریضوں یا ان کے لواحقین کیلئے کوئی سرائی نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں