Download (6)

وزیر اعظم اپنے دور جموں کے دوران 3ہزار 161کروڑ روپے پروجیکٹوں کا افتتاح کریں گے

لوک سبھا انتخابات کیلئے انتخابی مہم کا باضابطہ آغاز کرکے بھاری عوامی ریلی سے وزیر اعظم خطاب کریں گے
جموں میں ذاتی طور پر اور وادی میں ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے پروجیکٹوں کا افتتاح اور سنگ بنیاد رکھنے والے ہیں
سرکاری سطح پر تمام تیاریاں مکمل، حفاظتی اقدامات کو حتمی شکل دی گئی، سرینگر کے ساتھ ساتھ جموں میں بھی کڑے بندوبست

سرینگر//وزیر اعظم نریندر مودی 20فروری کوجموں کشمیرمیں 3ہزار 161کروڑ روپے کی لاگت والے 124پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھیں گے جن میں ننت ناگ، کولگام میں کشمیری مہاجر پنڈتوں کیلئے 2816فلیٹس پر مشتمل ٹرنزنٹ کیمپ، شوپیاں ، پلوامہ اور سرینگر کے پارم پورہ میں ٹرانسپورٹ نگر کی اپ گریڈیشن بھی شامل ہے ۔ جموں میں صوبے کے کچھ اضلاع اور وادی میں کے پروجیکٹوں کا ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے افتتاح اور سنگ بنیاد رکھیں گے ۔ اس کے علاوہ وزیر اعظم نریندر مودی جموں کشمیر سے لوک سبھا انتخابات کیلئے باضابطہ طور پر انتخابی مہم شروع کریں گے۔ جموں کے مولانا آزاد سٹیڈیم میں ایک عوامی ریلی سے خطاب کریں گے جہاں ایک لاکھ سے زائد لوگ موجود ہوں گے ۔ اس ضمن میں سرکاری سطح پر بھی تیاریاں مکمل کی جاچکی ہے اور حفاظتی انتظامات کو بھی حتمی شکل دی گئی ہے ۔ وائس آف انڈیا کے مطابق وزیر اعظم نریندر مودی 20 فروری کو اپنے جموں و کشمیر کے دورے کے دوران 3,161 کروڑ روپے کے پروجیکٹوں کا افتتاح،سنگ بنیاد رکھیں گے۔پی ایم مودی یوٹی میں لوک سبھا انتخابات کے لئے بی جے پی کی انتخابی مہم کا باقاعدہ آغاز بھی کریں گے۔ جموں و کشمیر میں لوک سبھا کی پانچ سیٹیں ہیں جن میں سے دو بی جے پی کے پاس ہیں۔ پارٹی کو امید ہے کہ اس بار اپنی تعداد میں اضافہ ہوگا۔وزیر اعظم جموں شہر کے ایم اے اسٹیڈیم میں ایک عوامی ریلی سے خطاب کریں گے جہاں بی جے پی کا کہنا ہے کہ ایک لاکھ سے زیادہ لوگ جمع ہوں گے۔ عوامی ریلی میں شرکت کے لیے خاص جوش و خروش دیکھا جا رہا ہے پہاڑی برادری جسے حال ہی میں ایس ٹی کا درجہ دیا گیا ہے۔ایم اے اسٹیڈیم میں اپنے متوقع دو گھنٹے طویل پروگرام کے دوران وزیر اعظم اسٹیڈیم سے 3,161 کروڑ روپے کے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد اور افتتاح کریں گے۔عہدیداروں نے کہا کہ وہ نوجوانوں کو تقرری خط بھی فراہم کریں گے اور اسٹیڈیم سے ویڈیو کانفرنسنگ پروگرام کے ذریعے لوگوں سے بات چیت کریں گے۔پی ایم مودی جموں سری نگر ٹرین کا جزوی طور پر افتتاح کریں گے جو بانہال شہر سے آگے 48.5 کلومیٹر کا علامتی سفر طے کرے گی۔ریلوے حکام نے بتایا کہ ٹرین کا عملی طور پر افتتاح وزیر اعظم کریں گے اور یہ کشمیر کے بارہمولہ قصبے سے سنگلدان تک جموں کے بانہال میں اس کے موجودہ ڈی بورڈنگ اسٹیشن سے 48.5 کلومیٹر آگے چلے گی۔وزیر اعظم کے ذریعہ جن پروجیکٹوں کا عملی طور پر افتتاح کیا جائے گا ان میں سانبہ ضلع کے وجے پور قصبے میں ایمس، ضلع ریاسی میں سب سے اونچا ریلوے پل، دیویکا ریجوینیشن پروجیکٹ، شاہ پور کنڈی پروجیکٹ، آئی آئی ایم جموں، جموں و کشمیر دونوں ڈویڑنوں میں کئی بڑی سڑکیں اور پروجیکٹ شامل ہیں۔ وہ 20 فروری کو میں 124 نئے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد بھی رکھیں گے۔ ان میں 2210 کنال پر محیط نو انڈسٹریل اسٹیٹس، 62 سڑکوں کے پروجیکٹوں اور 42 پلوں کی تعمیر اور اپ گریڈیشن، اننت ناگ، کولگام میں نو مقامات پر کشمیری مہاجر پنڈتوں کے لیے 2816 فلیٹس شامل ہیں۔ وادی کے کپواڑہ، شوپیاں اور پلوامہ اضلاع، سری نگر کے پاریم پورہ میں ٹرانسپورٹ نگر کی اپ گریڈیشن،تجدید اور جموں سمارٹ سٹی کے لیے ڈیٹا سینٹر،ڈیزاسٹر ریکوری سنٹر کے لیے مربوط کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹرسمیت کل 85 پروجیکٹوں کا وزیر اعظم کے ذریعہ عملی طور پر افتتاح کیا جائے گا جن میں گاندربل اور کپواڑہ میں مہاجر پنڈوں کے لئے 224 فلیٹس کی ٹرانزٹ رہائش، چار مقامات پر ڈگری کالج کی عمارتوں کا بنیادی ڈھانچہ، کٹھوعہ میں ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹری، گرڈ اسٹیشن، ریسیونگ اسٹیشن اور ٹرانسمیشن لائن پروجیکٹ شامل ہیں۔ جموں و کشمیر دونوں ڈویڑنوں میں 12 سڑکوں کے منصوبے اور تین پل، ناروال فروٹ منڈی کی جدید کاری، سانبہ میں پانچ کامن ایفلوئنٹ ٹریٹمنٹ پلانٹس اور سری نگر شہر میں انٹیلیجنٹ ٹریفک مینجمنٹ سسٹم شامل ہیں۔جموں و کشمیر میں وزیر اعظم کی طرف سے آخری عوامی ریلی سے خطاب 24 اپریل 2022 کو سانبا ضلع کے پلی پنچایت میں کیا گیا تھا۔واضح رہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے دفعہ 370کی کے بعد صرف ایک بار وادی کشمیر کا دورہ کیا تھا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں