Download (16)

مرکزی حکومت کے ملازمین کے لیے تنخواہ میں اضافہ

ڈی اے 50 فیصد تک پہنچ جائے گا، ایچ آر اے، گریجویٹی، دیگر اجزاء بھی بڑھیں گے

سرینگر// مرکزی حکومت کے ملازمین اپنے اگلے مہنگائی الاؤنس (DA) میں اضافے کا بے صبری سے انتظار کر رہے ہیں۔ صنعتی کارکنوں کے لیے صارف قیمت اشاریہ (CPI-IW) نمبروں کے مطابق، جیسا کہ لیبر بیورو، وزارت محنت کے ایک وِنگ کے ذریعہ شائع کیا گیا ہے، مرکزی حکومت کے ملازمین کے لیے مہنگائی الاؤنس 50% تک بڑھنے کا امکان ہے۔ڈی اے مرکزی حکومت کے ملازمین کی تنخواہ کا ایک جزو ہے۔ اس کا مقصد افراط زر کے اثرات کو کم کرنا ہے۔اب، اگر ڈی اے 50فیصد تک پہنچ جاتا ہے، تو کچھ دیگر الاؤنسز اور تنخواہ کے اجزاء بھی بڑھ جائیں گے، جس سے آپ کی تنخواہ میں نمایاں اضافہ ہوگا۔ ساتویں مرکزی تنخواہ کمیشن نے تفصیلی انتظامات کیے ہیں کہ ڈی اے 50% کو چھونے سے آپ کی تنخواہ پر کیا اثر پڑے گا۔ آئیے یہاں تفصیلات معلوم کرتے ہیں۔ایچ آر اے، بچوں کا تعلیمی الاؤنس، ڈیلی الاؤنس، ڈی اے 50 فیصد تک پہنچنے پر دیگر الاؤنسز بڑھ جائیں گے۔منمیت کور، پارٹنر، کرنجا والا اینڈ کمپنی، کہتی ہیں کہ ڈی اے 50% تک پہنچنے پر جو الاؤنسز بڑھیں گے ان میں شامل ہیں:مکان کا کرایہ الاؤنس2) بچوں کا تعلیمی الاؤنس3) بچوں کی دیکھ بھال کے لیے خصوصی الاؤنس4) ہاسٹل سبسڈی5) منتقلی پر TA (ذاتی اثرات کی نقل و حمل)6) گریجویٹی کی حد7) لباس الاؤنس8) اپنی نقل و حمل کے لیے مائلیج الاؤنس9) ڈیلی الاؤنس۔مثال کے طور پر، تمام مرکزی حکومت کے ملازمین کو ہاؤس رینٹ الاؤنس (HRA) ملتا ہے، اس پر منحصر ہے کہ وہ کہاں رہتے ہیں۔ 7ویں پے کمیشن کی سفارشات کے مطابق، یکم جولائی 2017 سے HRA کو کلاس X، Y اور Z شہروں کے لیے بالترتیب بنیادی تنخواہ کے 24%، 16% اور 8% پر معقول بنایا گیا ہے۔ جب DA 25% کو چھو گیا، 7ویں پے کمیشن کی سفارشات کے مطابق، X، Y اور Z شہروں میں HRA کی شرحوں کو 27%، 18% اور بنیادی تنخواہ کے 9% پر نظرثانی کیا گیا۔اب، یہ بھی سفارش کی جاتی ہے کہ جب ڈی اے 50 فیصد تک پہنچ جائے تو X، Y اور Z شہروں میں HRA کی شرحوں کو بالترتیب 30%، 20% اور 10% بنیادی تنخواہ پر نظر ثانی کی جائے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں