428682077 792135372951343 3245871504561313250 N 750x430

لیفٹیننٹ گورنرنےپونچھ میں تین شہریوں کے لواحقین کو ملازمت کے خطوط سونپے

سرینگر//جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے اتوار کو تین شہریوں کے قریبی رشتہ داروں کو سرکاری ملازمت کے تقرری کے خطوط سونپے، جو گزشتہ سال دسمبر میں پونچھ ضلع میں دہشت گردوں کے حملے کے بعد مبینہ طور پر فوج کی حراست میں مارے گئے تھے۔

ایک سرکاری ترجمان نے بتایا کہ رہائشی مقاصد کے لیے ایک ایک کنال اراضی کی الاٹمنٹ کے احکامات بھی خاندانوں کے حوالے کیے گئے ہیں۔ گزشتہ سال 21 دسمبر کو ڈھیرہ کی گلی اور بفلیاز کے درمیان دھتیار موڑ کے مقام پر دہشت گردوں نے فوج کی دو گاڑیوں پر گھات لگا کر حملہ کیا تھا جس میں چار فوجی ہلاک اور تین زخمی ہو گئے تھے۔تین شہریوں — محفوظ احمد (43)محمد شوکت علی (27) اور شبیر احمد (32)کو فوج نے گھات لگانے کے بعد پوچھ گچھ کے لیے اٹھایا اور اگلے دن وہ مردہ پائے گئے۔لیفٹیننٹ گورنر کی زیرقیادت انتظامیہ نے 23 فروری کو مقتول شہریوں کے لواحقین کو معاوضے اور نوکریوں کا اعلان کیا تھا۔

ترجمان نے کہا کہ لیفٹیننٹ گورنر نے SRO-43 کے تحت تقرری کے احکامات پونچھ میں مارے گئے شہریوں کے لواحقین کو سونپے۔انہوں نے کہا کہ تقرری کے احکامات محفوظ احمد کی اہلیہ زرینہ بیگم، شوکت علی کے بھائی محمد رزاق اور شبیر احمد کے بھائی محمد کبیر کے حوالے کیے گئے تھے — یہ سبھی سورنکوٹ کے علاقے بفلیاز کے ایک گاؤں کے رہائشی ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ لیفٹیننٹ گورنر نے لواحقین کو مستقبل میں اپنی انتظامیہ کی طرف سے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا، اس موقع پر پونچھ کے ڈپٹی کمشنر چودھری محمد یاسین بھی موجود تھے۔تین شہریوں کی ہلاکت نے غم و غصے کو جنم دیا اور فوج نے فوری طور پر کارروائی کی اور تینوں شہریوں کی مبینہ تشدد اور اس کے نتیجے میں ہونے والی موت کی کورٹ آف انکوائری شروع کی۔سورنکوٹ بیلٹ کے انچارج بریگیڈیئر سطح کے افسر کو فوری طور پر منتقل کر دیا گیا اور فوج نے متعلقہ یونٹ کے افسران کے خلاف کارروائی کی یقین دہانی بھی کرائی جبکہ پولیس نے فوجی یونٹ کے خلاف قتل کا مقدمہ درج کر لیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں