170879430

عراق اور شام کی مدد کے لیے ہم نے اپنے بہترین فوجی مشیروں کا خون پیش کیا ہے، امیرعبداللہیان

ایران // ایران کے وزیر خارجہ حسین امیرعبداللہیان نے ڈیووس اجلاس میں شرکت کے دوران امریکی چینل CNBC کے ساتھ گفتگو میں کہا کہ یمن کی قومی سالویشن گورنمنٹ یمن کے بڑے حصوں اور دارالحکومت صنعا میں کئی سالوں سے قائم ہے اور وہ سعودی حکومت کے ساتھ مذاکرات کے فریقین میں سے ایک ہے۔ حالیہ مہینوں میں. ہماری معلومات کے مطابق وہ سعودی عرب کے ساتھ دیرپا معاہدے تک پہنچنے کے آخری مراحل میں ہیں۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ یمنی مختلف محازوں پر ذمہ دارانہ رویے کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ وہ غزہ میں ہونے والی نسل کشی سے بیزار ہیں اور اسی وجہ سے انہوں نے بحیرہ احمر میں اسرائیل کی بندرگاہوں کی طرف جانے والے بحری جہازوں کو روک دیا جو غزہ سے گزر رہے تھے۔ یہ فیصلہ یمن کی طرف سے لیا گیا ہے، لیکن ہم نے ان سے بارہا سنا ہے کہ وہ جہاز رانی اور نیویگیشن کی آزادی کے پابند ہیں۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم نے ہمیشہ خطے کی ترقی میں مثبت کردار ادا کیا ہے۔ گزشتہ برسوں میں دراصل ایران ہی تھا جو شام اور عراق کے عوام اور حکومت کی مدد کو پہنچا اور داعش کے خلاف جنگ میں ان کی مدد کی۔ ہم نے عراق اور شام کے عوام اور مسلح افواج کی مدد کے لیے اپنے بہترین فوجی مشیروں کا خون پیش کیا ہے۔ لیکن بحیرہ احمر میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کے سلسلے میں ہمیں اس مسئلے کی اصل جڑ پر توجہ دینی چاہیے۔

انکہ کہنا تھا کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ مجھے ڈیووس میں نہیں ہونا چاہیے تو میرا جواب یہ ہے کہ جن لوگوں نے گزشتہ 100 دنوں میں غزہ کی نسل کشی کی حمایت کی اور 18 ہزار سے زائد بچوں اور خواتین سمیت 24 ہزار شہریوں کی ہلاکت کا سبب بنی، انہیں چاہیے کہ وہ ڈیووس میں نہ ہو۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں اس پہیلی کے صرف ایک ٹکڑے کو نہیں دیکھنا چاہیے، یعنی بحیرہ احمر۔ سب سے پہلے، ہم سمجھتے ہیں کہ اس بحران کی اصل غزہ میں صیہونی حکومت کے جرائم اور فلسطینیوں کی نسل کشی ہے۔ اگر ان جرائم اور نسل کشی کو روک دیا جائے تو قدرتی طور پر جنگ کے دائرہ کار میں توسیع کو منطقی طریقے سے روکا جا سکتا ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے واضح کیا کہ یمن اور خطے کے دیگر ممالک اور خطے کے لوگ جو فلسطینی عوام بالخصوص غزہ کا دفاع کر رہے ہیں، اپنے تجربات اور فیصلوں کی بنیاد پر کام کر رہے ہیں اور انہیں ہماری طرف سے کوئی حکم یا ہدایات جاری نہیں ہوتیں۔ بلاشبہ ہم مظلوم فلسطینیوں کا دفاع کرنے پر ان کی تعریف کرتے ہیں۔

انکا کہنا تھا کہ سمندری گزرگاہوں کی حفاظت ہمارے لیے بہت اہمیت کی حامل ہے، کیونکہ ہم خود سمندری راستے سے تیل کی تجارت اور برآمد میں مصروف ہیں اور بحیرہ احمر، خلیج فارس اور بین الاقوامی پانیوں کی سلامتی ہمارے مفاد میں ہے لیکن ہم سمجھتے ہیں کہ خطے کو غیر مستحکم کرنے کے لیے کسی بھی اقدام کی جڑیں اسرائیل اور غزہ میں اس کی نسل کشی سے وابستہ ہیں لہذا ان جرائم کو جڑ سے کاٹنا چاہیے۔

حسین امیرعبداللہیان نے کہا کہ 75سال کے قبضے سے اسرائیل کے وجود کا کوئی جواز پیدا نہیں ہوتا۔ ہم سمجھتے ہیں کہ فلسطینی عوام کو اقوام متحدہ کی نگرانی میں ریفرنڈم کروا کر اپنی قسمت کا فیصلہ خود کرنا چاہیے۔ اس ریفرنڈم میں ہم عیسائیوں، یہودیوں اور مسلمانوں سمیت تمام حقیقی فلسطینی باشندوں کے فیصلے کا احترام کریں گے۔

انٹرویو کے ایک حصے میں انہوں نے کہا میں وائٹ ہاؤس کو بتانا چاہتا ہوں کہ وہ ایران کے ساتھ اپنے معاہدے اور ان وعدوں پر قائم رہیں جو انہوں نے ہم سے کیے تھے۔ امریکہ اور مسٹر بائیڈن کو اپنی قسمت کو نیتن یاہو کی قسمت سے نہیں جوڑنا چاہیے۔ اسرائیل میں نیتن یاہو جیسے ٹھگوں کے ساتھ بائیڈن اور وائٹ ہاؤس کا مکمل تعاون خطے میں عدم تحفظ کی جڑ ہے۔ صدر بائیڈن کو فلسطینی نسل کشی اور 13,500 سے زائد فلسطینی بچوں کے قتل کے لیے اپنی مکمل حمایت کو فوری طور پر ختم کرنا چاہیے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ نیتن یاہو سرنگ کے اختتام پر پہنچ چکے ہیں اور کوئی طبی سامان یا آکسیجن کیپسول انہیں زندہ نہیں رکھ سکتا اور نہ ہی انجام سے بچا سکتا ہے۔

انہوں نے تاکید کی کہ ہم خطے میں امن اور سلامتی چاہتے ہیں اور ہماری خواہش ہے کہ غزہ میں جنگ بند ہو اور ہمارے خطے میں امن لوٹ آئے۔

حسین امیرعبداللہیان نے کہا کہ ہم امریکی عوام کا احترام کرتے ہیں لیکن آخر میں جان لیں کہ یمن اور حوثی (انصار اللہ) تہذیب اور ثقافت اعلیٰ ہے۔ ہزاروں سال پہلے جب دنیا کے نقشے پر امریکہ نام کا کوئی ملک نہیں تھا، یمن میں اسوقت بھی ایک عظیم ترین انسانی تہذیب موجود تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں