Budget 1 696x430

عبور ی بجٹ لوک سبھا میں پیش ، بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے اخراجات میں 11.1فیصد کا اضافہ /وزیر خزانہ

نئی دہلی// وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے جمعرات کو پارلیمنٹ میں عبوری بجٹ 2024-25 پیش کرتے ہوئے کہا کہ حکومت سال 2014 تک کی صورتحال کے بارے میں ایوان کی میز پر معیشت پر ایک وائٹ پیپر پیش کرے گی۔محترمہ سیتا رمن نے کہا کہ اس کا مقصد یہ معلوم کرنا ہے کہ ہم 2014 تک کہاں تھے اور اب کہاں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وائٹ پیپر کا مقصد ان سالوں کی بدانتظامی سے سبق سیکھنا بھی ہے۔ جب ہماری حکومت نے 2014 میں باگ ڈور سنبھالی تو معیشت کو مرحلہ وار بہتر کرنے اور گورننس کے نظام کو درست راستے پر لانے کی ذمہ داری بہت بڑی تھی۔انہوں نے کہا کہ وقت کی ضرورت لوگوں کی توقعات کو بڑھانا، سرمایہ کاری کو راغب کرنا اور انتہائی ضروری اصلاحات کے لیے حمایت حاصل کرنا ہے۔

حکومت نے یہ کامیابی ‘نیشن فرسٹ’ کے پختہ یقین کے ساتھ حاصل کی۔اس وقت اور اب کی معیشت کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ ان سالوں کے بحرانوں پر قابو پا لیا گیا ہے اور ہماری معیشت ہمہ جہت ترقی کے ساتھ اعلیٰ پائیدار ترقی کی راہ پر گامزن ہو گئی ہے۔محترمہ سیتا رمن نے کہا کہ حکمرانی، ترقی اور کارکردگی، موثر ترسیل اور ‘عوام کی بہبود’ کے مثالی ٹریک ریکارڈ نے حکومت پر لوگوں کا اعتماد حاصل کی ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ‘ترقی یافتہ ہندوستان’ کا ہدف اچھے ارادوں، سچی لگن اور آنے والے سالوں اور دہائیوں میں بہت ساری کوششوں سے حاصل کیا جا سکتا ہے، چاہے اس کے لیے کتنی ہی کوشش کیوں نہ کرنی پڑے۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی حکومت چار بڑے طبقوں ‘غریب’، ‘خواتین’، نوجوانوں اور ان داتا‘ کو راحت فراہم اور ان کی ترقی پر توجہ دینے میں یقین رکھتی ہے۔محترمہ نرملا سیتا رمن نے کہا کہ چار بڑے طبقوں کی ضروریات اور خواہشات اور ان کی فلاح و بہبود حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ ملک ترقی کرتا ہے جب ان چاروں طبقوں کے لوگ ترقی کرتے ہیں۔ ان چار طبقوں کے لوگوں کو اپنی زندگی کو بہتر بنانے کی کوشش میں حکومتی مدد کی ضرورت ہے اور انہیں سرکاری امداد بھی مل رہی ہے۔ ان کی بااختیاریت اور ان کی فلاح و بہبود سے ملک ترقی کرے گا۔انہوں نے کہاکہ “سماجی انصاف ہماری حکومت کے لیے ایک موثر اور ضروری حکمرانی کا طریقہ ہے۔ بدعنوانی میں کمی سے شفافیت آئی ہے اور تمام اہل افراد کو سرکاری اسکیموں کا فائدہ مل رہا ہے۔ “ہماری حکومت اخراجات کی فکر کرنے کے بجائے نتائج پر توجہ دیتی ہے۔”وزیر خزانہ نے کہاکہ”ہماری حکومت ہمہ جہت اور ہمہ گیر ترقی کے وڑن کے ساتھ 2047 تک ہندوستان کو ایک ‘ترقی یافتہ ہندوستان’ بنانے کے لیے کام کر رہی ہے۔ اس مقصد کو حاصل کرنے کے لیے ہمیں لوگوں کی صلاحیت میں اضافہ کرنا ہوگا اور انہیں بااختیار بنانا ہوگا۔“ وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے جمعرات کو پارلیمنٹ میں عبوری بجٹ 2024-25 پیش کرتے ہوئے کہا کہ بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے اخراجات میں 11.1 فیصد اضافہ کیا گیا ہے اور مجموعی طور پر 11,11,111 کروڑ روپے کی رقم رکھی گئی ہے۔ جو کہ مجموعی گھریلو پیداوار (جی ڈی پی) کا 3.4 فیصد ہو گا۔محترمہ سیتا رمن نے کہا کہ اخراجات میں اضافے سے اقتصادی ترقی میں تیزی آئے گی اور روزگار کے مواقع کئی گنا بڑھیں گے۔ پردھان منتری گتی شکتی کے تحت تین بڑے اقتصادی راہداریوں کی نشاندہی کی جائے گی۔ یہ تین کوریڈور توانائی، معدنیات اور سیمنٹ کی راہداری، بندرگاہ کے رابطے کی راہداری اور ہائی ٹریفک کوریڈور ہیں۔ ان منصوبوں سے نہ صرف رابطے بڑھیں گے بلکہ رسد میں بھی بہتری آئے گی اور لاگت میں کمی آئے گی۔انہوں نے کہا کہ مسافروں کی سہولت، راحت اور حفاظت کو بڑھانے کے لیے 40,000 جنرل ریلوے کوچز کو “وندے بھارت” کے معیارات میں تبدیل کیا جائے گا

۔وزیر خزانہ نے کہا کہ گزشتہ 10 سالوں میں ملک میں ہوائی اڈوں کی تعداد دگنی ہو کر 149 ہوگئی ہے۔ اڑان اسکیم کے تحت مزید شہروں کو فضائی راستوں سے جوڑا گیا ہے۔ جس کے نتیجے میں ملک کی ایوی ایشن کمپنیاں 1000 سے زائد نئے طیاروں کی خریداری کے آرڈر دے کر ترقی کی راہ پر گامزن ہیں۔ موجودہ ہوائی اڈوں کی توسیع اور نئے ہوائی اڈوں کی ترقی تیز رفتاری سے جاری رہے گی۔انہوں نے کہا کہ میٹرو ریل اور نمو بھارت ریل نظام سے خاص طور پر بڑے شہروں میں نقل و حرکت پر مبنی ترقی کو فروغ ملے گا۔ وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے کہا ہے کہ چھتوں پر سولر سسٹم لگانے والے ایک کروڑ خاندانوں کو ہر ماہ 300 یونٹ تک مفت بجلی فراہم کی جائے گی۔جمعرات کو لوک سبھا میں 2024-25 کا عبوری بجٹ پیش کرتے ہوئے محترمہ سیتا رمن نے کہا کہ یہ اسکیم بہت مفید ہے اور یہ ایک کروڑ خاندانوں کو ہر ماہ تین سو یونٹ بجلی فراہم کرنے کے قابل ہے۔ ادائیگی کے حفاظتی طریقہ کار کے ذریعے پبلک ٹرانسپورٹ کے لیے ای بسوں کے بڑے پیمانے پر استعمال کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔ انہوں نے ہمہ جہت اور ہمہ گیر ترقی کے حکومت کے وڑن کے بارے میں بتایا۔وزیر خزانہ نے کہا کہ چھتوں پر سولر سسٹم لگانے سے ایک کروڑ خاندان ہر ماہ 300 یونٹ تک مفت بجلی حاصل کر سکیں گے۔انہوں نے کہا کہ الیکٹرک گاڑیوں کی چارجنگ، سپلائی اور انسٹالیشن بڑی تعداد میں دکانداروں کو کاروباری مواقع فراہم کرے گی اور مینوفیکچرنگ، انسٹالیشن اور مینٹیننس میں تکنیکی مہارت رکھنے والے نوجوانوں کو روزگار کے مواقع میسر آئیں گے۔2070 تک گرین انرجی میں ‘نیٹ زیرو’ کا عہد کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ عبوری بجٹ 2024-25 میں تجویز کردہ اقدامات میں ایک گیگا واٹ کی ابتدائی صلاحیت کے لیے آف شور ونڈ پاور کو استعمال کرنے کی صلاحیت شامل ہے اور 2030 تک 100 ٹن کول گیسیفیکیشن اور لیکیفیکیشن کی صلاحیت قائم کی جائے گی۔ اس سے قدرتی گیس اور میتھین پیدا ہوگی۔ اس سے قدرتی گیس، میتھانول اور امونیا کی درآمدات کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔انہوں نے کہا کہ حکومت کرائے کے مکانوں یا کچی بستیوں یا چالوں میں رہنے والے اہل متوسط ??طبقے کے لوگوں کو اپنا مکان فراہم کرے گی اور غیر مجاز کالونیاں میں مکان خریدنے یا تعمیر کرنے میں مدد کے لیے ایک اسکیم شروع کرے گی۔پردھان منتری آواس یوجنا (دیہی) کی کامیابیوں کا تذکرہ کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ کووڈ سے درپیش چیلنجوں کے باوجود اسکیم کا نفاذ جاری رہا اور حکومت تین کروڑ گھروں کے ہدف کو حاصل کرنے کے قریب ہے۔ انہوں نے کہا کہ خاندانوں کی تعداد میں اضافے کی وجہ سے بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے آئندہ پانچ سالوں میں دو کروڑ اضافی مکانات کی تعمیر کا کام شروع کیا جائے گا۔محترمہ سیتا رمن نے کہا کہ 2047 تک ملک کو ‘ترقی یافتہ ہندوستان’ بنانے کے عزم کے ساتھ حکومت ہمہ جہت اور ہمہ گیر ترقی کے وڑن کے ساتھ کام کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت امرت پیڑھی۔یووا نوجوانوں کو بااختیار بنانے کے لیے پرعزم ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری خوشحالی کا انحصار نوجوانوں کو مناسب طریقے سے لیس کرنے اور انہیں بااختیار بنانے پر ہے۔ قومی تعلیمی پالیسی 2020 کے ذریعے تبدیلی کی اصلاحات لائی جا رہی ہیں۔ ابھرتے ہوئے ہندوستان کے لیے پی ایم شری اسکول میں معیاری تعلیم دی جارہی ہے اور بچوں کی ہمہ جہت اور ہمہ گیر ترقی کی جارہی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں