Sia 750x377

سرینگر میں 18مقامات پر ایس آئی اے چھاپے ، مجرمانہ مواد ، ڈیجیٹل آلات اور کمپیوٹر ضبط

سرینگر // بین الاقوامی انسانی اسمگلنگ کیس کی تحقیقات میں سٹیٹ تحقیقاتی ایجنسی ( ایس آئی اے ) نے اپنی کارروائی تیز کر دی ہے اور انہوں نے سرینگر میں 18مقامات پر چھاپے ڈالیں اور تلاشیاں لی گئی ۔

معلوم ہوا ہے کہ ایس آئی اے نے سرینگر پولیس اور سی آر پی ایف کے ہمراہ سرینگر کے مختلف علاقوں میں چھاپے ڈالیں اور تلاشیاں لی ۔ اس سلسلے میں ایس آئی کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق ایس آئی اے کی ٹیموں نے سرینگر پولیس کی مدد سے صبح سویرے سرینگر کے کئی مقامات پر چھاپے ڈالیں جس دوران مجرمانہ مواد اور دستاویزات جیسے شناختی کارڈ، بینک پاس بک اور علاوہ ڈیجیٹل آلات جیسے موبائل فون اور کمپیوٹر ضبط کیے گئے ہیں۔

ترجمان نے بیان میں کہا کہ یہ مقدمہ غیر ملکی شہریوں کی ہندوستانی حدود میں، خاص طور پر میانمار اور بنگلہ دیش سے غیر قانونی اسمگلنگ سے متعلق ہے۔ تحقیقات سے پتہ چلتا ہے کہ کمزور غیر ملکی شہریوں کو روزگار کے مواقع کی آڑ میں بھارت سمگل کیا جاتا ہے۔ جموں و کشمیر میں ان کی نقل و حمل کے بعد، انہیں جعلی اور غیر قانونی انسانی وسائل کی ایجنسیوں کو فروخت کیا جاتا ہے، جو ان کا مزید استحصال کرتے ہیں جیسے کہ گھریلو ملازمہ، نوکرانیاں، اور بچوں کی نوکری کے مواقع کی آڑ میں، جو اکثر جنسی استحصال کا باعث بنتے ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ یہ مذموم منصوبہ ایک وسیع تر سازش کا حصہ ہے جو بین الاقوامی دہشت گرد تنظیموں نے بدنام زمانہ سرحد پار انسانی اسمگلروں کے ساتھ مل کر رچی تھی۔ یہ گروہ بین الاقوامی سرحدوں کے پار غیر ملکی شہریوں کی دراندازی کی سہولت فراہم کرتے ہیں، ان کی اصل شناخت کو جعلی ہندوستانی دستاویزات سے چھپاتے ہیں جس کا حتمی مقصد جموں و کشمیر میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں مدد، عمل درآمد یا سہولت فراہم کرنے کے لیے سلیپر سیل قائم کرنا ہے۔تحقیقاتی ایجنسی نے بتایا کہ ضبط شدہ مواد کی باریک بینی سے جانچ کی جائے گی تاکہ تمام ملزمین کی شناخت کی جائے اور انہیں قانون کے کٹہرے میں لایا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں