Download (4)

دفعہ 370کی منسوخی کے بعد پہلی بار جموں و کشمیر اور لداخ کے لوگ ہمیشہ کیلئے آزاد ہو گئے ہیں / وزیر اعظم مودی

جموں و کشمیر میں سیاحتی ریکارڈ بلندیوں کو چھو رہا ہے ،پائیدار امن، استحکام اور خوشحالی کی راہ پر گامزن
’’لوگ آج ہر پہلو میں ہمہ جہت ترقی دیکھ رہے ہیں چاہے وہ جمہوریت ہو، ترقی ہو یا حرکیات‘‘

سرینگر // جموں و کشمیر میں سیاحتی ریکارڈ بلندیوں کو چھو رہا ہے کی بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ جموں کشمیر کی خصوصی پوزیشن دفعہ 370کو 5 اگست 2019 کو ختم کر دیا تھا اور اس فیصلے کو اس سال 11 دسمبر کو سپریم کورٹ نے برقرار رکھا تھاجس سے پہلی بار جموں و کشمیر اور لداخ کے لوگ ہمیشہ کیلئے آزاد ہو گئے ہیں۔ ایک قومی انگریزی خبر رساں ادارے کے ساتھ خصوصی انٹرویو میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ جموں کشمیر میں ملی ٹنسی کی کمر توڑ دی گئی اور اب یوٹی میں سیاحت ریکارڈ بلندیوں کو چھو رہی ہے۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ مرکزی حکومت نے سیکورٹی، ترقی، سرمایہ کاری کے بنیادی ڈھانچے اور انسانی سرمائے پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے کثیر الجہتی نقطہ نظر اپنایا ہے۔ انہوں نے کہا ’’ہم خطے کے لوگوں کے معیار زندگی کو بہتر بنا کر، اقتصادی ترقی کو فروغ دے کر اور روزگار کے مواقع پیدا کر کے پائیدار امن، استحکام اور خوشحالی کو یقینی بنانے کی راہ پر گامزن ہیں‘‘۔جموں و کشمیر میں انتخابات کے انعقاد پر وزیر اعظم نے کہا کہ یوٹی کی پہلے ہی قومی سطح پر پارلیمنٹ میں نمائندگی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ مقامی سطح پر، ہم پہلی بار جمہوریت کو نچلی سطح تک لے جانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ جموں و کشمیر میں تین درجے کا پنچایتی راج نظام قائم کیا گیا ہے اور نچلی سطح پر 35,000 لیڈر منتخب ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا اور پوچھا: ’’ہم ان انتخابات کی اہمیت کو کم کیوں سمجھتے ہیں؟‘‘۔ وزیر اعظم مودی نے کہا ’’جموں و کشمیر اور لداخ کے لوگ آج ہر پہلو میں ہمہ جہت ترقی دیکھ رہے ہیں چاہے وہ جمہوریت ہو، ترقی ہو یا حرکیات‘‘۔اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ملی ٹنسی میں ریکارڈ کمی واقع ہوئی ہے جبکہ سیاحت ریکارڈ بلندیوں کو چھو رہی ہے، انہوں نے کہا کہG20اجلاس جیسے بین الاقوامی ایونٹس ہوئے ہیں اور دنیا نے جموں و کشمیر کی مہمان نوازی اور قدیم خوبصورتی کا مشاہدہ کیا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان کا آئین، جو سماجی اور کمزور گروہوں کے حقوق کا تحفظ کرتا ہے، جموں و کشمیر کے لوگوں پر مکمل طور پر لاگو ہوتا ہے۔دفعہ 370 کی منسوخی سے متعلق سوالات کا جواب دیتے ہوئے جسے مرکزی حکومت نے 5 اگست 2019 کو ختم کر دیا تھا اور اس فیصلے کو اس سال 11 دسمبر کو سپریم کورٹ نے برقرار رکھا تھا، نریندر مودی نے پہلی بار کہا کہ عوام جموں و کشمیر اور لداخ آرٹیکل 370 کے ہمیشہ کے لیے آزاد ہو گئے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ دو مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے لوگ اب اپنے ہاتھوں سے اپنی تقدیر سنوار سکتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں