Download (8)

جموں وکشمیر بجلی کٹوتی کی مناسبت سے ملک میں سب سے اوپر

جموں وکشمیر بجلی کٹوتی کی مناسبت سے ملک میں سب سے اوپر
تازہ اعداد وشمار بجلی کی پریشانیوں کی شدت کو بے نقاب کیا

سرینگر// جموں اور کشمیر اس وقت بجلی کی کافی کٹوتیوں سے دوچار ہے، جو روزانہ 18 گھنٹے سے زیادہ جاری رہتی ہے۔یہ دیرینہ مسئلہ سردیوں کے موسم میں مزید بڑھ گیا ہے۔ اسخطے میں بجلی کی ریکارڈ کٹوتی کا سامنا ہے۔ دو سال قبل وبائی مرض کے عروج کے دوران بھی بجلی کی فراہمی کے ساتھ چیلنجز واضح تھے، جس کی وجہ سے آکسیجن سلنڈر جیسے ضروری آلات کو چلانے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ ایک میڈیارپورٹ کے مطابق جموں و کشمیر دیگر تمام صوبوں میں نمایاں ہے جہاں بجلی کی طویل بندش کا سامنا ہے۔SAIDI (سسٹم ایوریج رکاوٹ دورانیہ انڈیکس) اور SAIFI (سسٹم اوسط مداخلت فریکوئنسی انڈیکس) میٹرکس مسئلے کی شدت کو ظاہر کرتے ہیں۔2021-22 کی مدت میںجموں کشمیر میں بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کے پی ڈی سی ایل اورجے پی ڈی سی ایل نے تشویشناک اعداد و شمار ریکارڈ کئے ہیں۔کے پی ڈی سی ایل نے فی صارف 889 گھنٹے کی رکاوٹوں کوریکارڑکیاہے جو تقریباً 37 دنوں کے بجلی کی کٹوتیوں کے برابر ہے، جبکہ جے پی ڈی سی ایل نے 489 گھنٹے، تقریباً 20 دن ریکارڈ کیے ہیں۔ستمبر 2023 کے مہینے کے لیے SAIFI اقدار کا مزید تجزیہ مسئلہ کے جاری رہنے کی نشاندہی کرتا ہے۔کے پی ڈی سی ایل نے 105 رکاوٹوں کی اطلاع دی ہے، جو دوسرے خطوں کے مقابلے میں نمایاں طور پر زیادہ ہے۔ مزید برآں، اسی مہینے میں، کے پی ڈی سی ایل نے 80 کی ویلیو ریکارڈ کی، جو کہ 80 گھنٹے بجلی کی کٹوتی کو ظاہر کرتی ہے، جو دوبارہ اعلیٰ ترین درجہ بندی میں ہے۔یہاں تک کہ شہری علاقوں میں، جہاں بجلی کی کٹوتی اکثر کم ہوتی ہے، جموں و کشمیر کو 2020-21 کی مدت میں 736 گھنٹے سے زیادہ بجلی کی کٹوتیوں کے ساتھ کافی چیلنجوں کا سامنا ہے۔یہ صورت حال گھریلو آمدنی،بچوں کے لیے پڑھائی کے وقت اور خواتین کے لیے روزگار کے مواقع پر منفی اثر ڈالتی ہے، جیسا کہ ورلڈ بینک کی رپورٹ میں روشنی ڈالی گئی ہے۔ علاقے کی بجلی کی پریشانیاں برقرار ہیں، شہری اور دیہی دونوں علاقوں پر اثر انداز ہوتے ہیں، اور یہدیگر ریاستوں کے درمیان ایک منفرد معاملہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں