بھارت نے چین کے اروناچل میں 30 مقامات کے نام تبدیل کرنے کو مسترد کر دیا

اروناچل پردیش ہندوستان کا حصہ ہے اور رہے گا
چین کے ذریعہ اروناچل پردیش کے مقامات کا نام رکھنا احمقانہ ہے: حکومت ہند

سرینگر// بھارت نے منگل کے روز چین کی جانب سے شمال مشرقی ہمالیائی ریاست اروناچل پردیش میں تقریباً 30 مقامات کے نام تبدیل کرنے کو مسترد کرتے ہوئے اس اقدام کو ’بے ہوش‘ قرار دیا اور اس بات کی تصدیق کی کہ سرحدی صوبہ بھارت کا ’اٹوٹ‘ حصہ ہے۔ادھر وزارت خارجہ کے ترجمان رندھیر جیسوال نے چینی حکومت کے اس اقدام کے بارے میں یہاں میڈیا کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا، “چین ہندوستانی ریاست اروناچل پردیش میں جگہوں کے نام تبدیل کرنے کی اپنی احمقانہ کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے۔وائس آف انڈیا کے مطابق بھارت نے منگل کے روز چین کی جانب سے شمال مشرقی ہمالیائی ریاست اروناچل پردیش میں تقریباً 30 مقامات کے نام تبدیل کرنے کو مسترد کرتے ہوئے اس اقدام کو ’بے ہوش‘ قرار دیا اور اس بات کی تصدیق کی کہ سرحدی صوبہ بھارت کا ’اٹوٹ‘ حصہ ہے۔ بیجنگ کا کہنا ہے کہ اروناچل پردیش، جسے وہ زنگنان کہتے ہیں، جنوبی تبت کا حصہ ہے – اس دعوے کو نئی دہلی نے بار بار مسترد کیا ہے۔ چین نے اسی طرح ایک سال قبل ریاست میں 11 مقامات کو چینی نام دے کر تناوبڑھایا تھا۔جوہری ہتھیاروں سے لیس پڑوسیوں کے دستے دسمبر 2022 میں ریاست میں اپنی متنازع سرحد پر معمولی جھگڑوں میں مصروف تھے، اور وسیع فوجی اور سفارتی بات چیت کے بعد تناو کم ہوا۔ اس کے باوجود ریاست اکثر ایشیائی جنات کے درمیان رگڑ کا سبب بنتی ہے جن کے تعلقات 2020 میں مغربی ہمالیہ میں ان کے فوجیوں کے درمیان خونریز سرحدی تصادم کے بعد سے ٹوٹ چکے ہیں۔چین نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا کہ اس نے تقریباً 30 مقامات کے ناموں کو معیاری بنایا ہے جسے وہ جنوبی تبت کہتے ہیں۔ وزارت خارجہ کے ترجمان رندھیر جیسوال نے منگل کے روز کہا، ” ایجاد کردہ ناموں کو تفویض کرنے سے اس حقیقت کو تبدیل نہیں کیا جائے گا کہ اروناچل پردیش ہمیشہ سے ہندوستان کا اٹوٹ اور ناقابل تنسیخ حصہ رہا ہے، ہے اور رہے گا۔ اس سے پہلے پیر کو ہندوستانی وزیر خارجہ سبرامنیم جے شنکر نے صحافیوں کو بتایا کہ “نام تبدیل کرنے سے کچھ نہیں ہوگا”۔ “اگر میں ا?پ کے گھر کا نام بدل دوں تو کیا وہ میرا گھر بن جائے گا؟ پچھلے مہینے، بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کا افتتاح کرنے کے لیے وزیر اعظم نریندر مودی کے ریاست کے دورے کے بعد، چین نے کہا تھا کہ وہ خطے میں ان کی سرگرمیوں کا مخالف ہے۔ بھارت نے ان دلائل کو بے بنیاد قرار دیا۔ امریکہ نے بھی اس معاملے پر غور کیا، اور کہا کہ اس نے اروناچل پردیش کو ہندوستانی علاقہ تسلیم کیا ہے اور اس پر فوجی یا شہری “دراندازی یا تجاوزات” کے ذریعے دعوے کرنے کی کسی بھی یکطرفہ کوشش کی “سخت مخالفت” کی ہے۔چین نے ان ریمارکس کی مخالفت کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس معاملے کا “امریکہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔” ہندوستان اور چین کے درمیان 3,800 کلومیٹر (2,400 میل) سرحد ہے – جس میں سے زیادہ تر کی حد بندی ناقص ہے – جس پر انہوں نے 1962 میں ایک خونریز جنگ بھی لڑی تھی۔2020 میں 20 ہندوستانی فوجی اور چار چینی فوجی ہاتھ سے ہاتھ دھونے کی لڑائی میں مارے گئے تھے، جس سے دونوں ممالک کو اپنی پوزیشن مضبوط کرنے اور سرحد پر اضافی فوجی اور سازوسامان تعینات کرنے پر مجبور کیا گیا تھا۔ادھر ہندوستان نے چین کی طرف سے اروناچل پردیش میں جگہوں کے نام تبدیل کرنے کو ‘منمانی’ اور احمقانہ حرکت قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے یہ حقیقت نہیں بدلے گی کہ اروناچل پردیش ہندوستان کا اٹوٹ حصہ ہے اور ہمیشہ رہے گا۔وزارت خارجہ کے ترجمان رندھیر جیسوال نے چینی حکومت کے اس اقدام کے بارے میں یہاں میڈیا کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا، “چین ہندوستانی ریاست اروناچل پردیش میں جگہوں کے نام تبدیل کرنے کی اپنی احمقانہ کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے۔ ہم ایسی کوششوں کو سختی سے مسترد کرتے ہیں’’۔انہوں نے کہا کہ “من گھڑت نام تفویض کرنے سے یہ حقیقت نہیں بدلے گی کہ اروناچل پردیش ہندوستان کا اٹوٹ اور ناقابل تنسیخ حصہ ہے اور رہے گا۔’’واضح رہے کہ چین نے اروناچل پردیش کا نام ‘جنگنان’ رکھا ہے اور اس ریاست کو جنوبی تبت کا حصہ ہونے کا دعویٰ کرتا ہے۔ کل اس نے ریاست میں 30 مختلف مقامات کے نئے چینی ناموں کی چوتھی فہرست جاری کی۔چینی وزارت برائے شہری امور نے سب سے پہلے 2017 میں اروناچل پردیش میں چھ مقامات کے “ناموں’’ کی پہلی فہرست جاری کی تھی، جب کہ 15 مقامات کی دوسری فہرست 2021 میں جاری کی گئی تھی۔ اس کے بعد 2023 میں 11 مقامات کے ناموں کی تیسری فہرست جاری کی گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں