Download (4)

بنگلہ دیش عام انتخابات:شیخ حسینہ کو ملی بڑی جیت،پانچویں بار مل گئی اقتدار

بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ نے ریکارڈ چوتھی بار مسلسل کامیابی حاصل کرلی ہے کیونکہ ان کی عوامی لیگ پارٹی نے عام انتخابات میں دو تہائی نشستیں حاصل کیں جن میں معمولی تشدد اور مرکزی اپوزیشن بی این پی اور اس کے اتحادیوں کے بائیکاٹ کا سامنا کرنا پڑا۔شیخ حسینہ کی پارٹی نے 300 نشستوں والی پارلیمنٹ میں 200 نشستیں حاصل کیں جبکہ اتوار کو دن بھر کی ووٹنگ کے اختتام کے بعد بھی گنتی جاری ہے۔الیکشن کمیشن کے ترجمان نے صحافیوں کو بتایا کہ ’’ہم پہلے سے دستیاب نتائج کے ساتھ عوامی لیگ کو فاتح قرار دے سکتے ہیں لیکن حتمی اعلان باقی حلقوں میں ووٹوں کی گنتی کے اختتام کے بعد کیا جائے گا۔
شیخ حسینہ نے 1986 کے بعد سے آٹھویں بار گوپال گنج-3 نشست جیتی۔ انہوں نے 249,965 ووٹ حاصل کیے جبکہ ان کے قریبی حریف بنگلہ دیش سپریم پارٹی کے ایم نظام الدین لشکر نے صرف 469 ووٹ حاصل کیے۔76سالہ رہنما، جو 2009 سے تزویراتی طور پر واقع جنوبی ایشیائی ملک پر حکمرانی کر رہے ہیں، نے یک طرفہ انتخابات میں ریکارڈ چوتھی بار اور مجموعی طور پر پانچویں مدت حاصل کی، جس میں کم ٹرن آؤٹ دیکھا گیا۔عوامی لیگ کے جنرل سیکرٹری عبیدالقادر نے دعویٰ کیا کہ عوام نے ووٹ ڈال کر بی این پی اور جماعت اسلامی کے الیکشن کے بائیکاٹ کو مسترد کر دیا ہے۔

عبید قادر نے کہا کہ میں ان لوگوں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے 12ویں قومی پارلیمانی انتخابات میں حصہ لینے کے لیے توڑ پھوڑ، آتش زنی اور دہشت گردی کے خوف کا مقابلہ کیا۔بارہویں قومی پارلیمانی انتخابات میں قومی اسمبلی کی رنگ پور 3 سیٹ سے قومی پارٹی کے چیئرمین جی ایم قادر نے کامیابی حاصل کی۔چیف الیکشن کمشنر قاضی حبیب الاول نے پہلے کہا کہ ابتدائی تخمینوں کے مطابق ووٹرز کا ٹرن آؤٹ تقریباً 40 فیصد تھا لیکن حتمی گنتی کے بعد یہ اعداد و شمار تبدیل ہو سکتے ہیں۔2018کے عام انتخابات میں مجموعی طور پر 80 فیصد سے زیادہ ٹرن آؤٹ ریکارڈ کیا گیاتھا۔بڑے پیمانے پر پرامن ووٹنگ کے باوجود، حکام اور مرکزی دھارے کے ذرائع ابلاغ نے جمعہ کے آخر سے ملک بھر میں آتش زنی کے کم از کم 18 حملوں کی اطلاع دی، جن میں سے 10 پولنگ کے مقامات کو نشانہ بنایا گیا۔
سابق وزیر اعظم خالدہ ضیا کی قیادت والی بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی (بی این پی) کے رہنماؤں نے کہا کہ پارٹی منگل سے ایک پرامن عوامی مشغولیت کے پروگرام کے ذریعے اپنی حکومت مخالف تحریک کو تیز کرنے کا ارادہ رکھتی ہے کیونکہ اس نے انتخابات کو “جعلی” قرار دیا ہے۔ بی این پی نے 2014 کے الیکشن کا بائیکاٹ کیا لیکن 2018 میں شامل ہو گئے۔ اس بار انہوں نے الیکشن کا بائیکاٹ کیا۔ پندرہ دیگر سیاسی جماعتوں نے بھی الیکشن کا بائیکاٹ کیا۔اس کے باوجود انتخابات کرائے گئے اور شیخ حسینہ اکثریت سے پانچویں بار فاتح قرار پائی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں