Download

ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر 30 سال کی جدوجہد اور قربانیوں کی انتہا ہے / موہن بھاگوت

ہندوستان کا قد گزشتہ چند سالوں میں عالمی سطح پر بلند ہوا ہے، اور اس کی وراثت اور ثقافت کو قبولیت مل رہی ہے

سرینگر // ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر 30 سال کی جدوجہد اور قربانیوں کی انتہا ہے کی بات کرتے ہوئے آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت نے کہا کہ ہندوستان کا قد گزشتہ چند سالوں میں عالمی سطح پر بلند ہوا ہے، اور اس کی وراثت اور ثقافت کو قبولیت مل رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہر شخص کی زندگی میں اچھی تبدیلیاں لانے کا وقت آ گیا ہے۔سی این آئی کے مطابق دتا جی بھلے اسمرتی سمیتی کریالیہ کے افتتاح کے موقع پر بات کرتے آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت نے کہا ’’لوگوں نے رام مندر کی تعمیر کیلئے چندہ دیا۔ یہ 30 سال کی جدوجہد کی وجہ سے تھا (یہ مندر بنایا گیا تھا)ہم رام جنم بھومی پر 500 سال سے ایک مندر چاہتے تھے۔ لوگ چندہ دینے کیلئے تیار تھے، اور جب مندر کا افتتاح ہوا تو پورا ملک مغلوب ہو گیا تھا۔ ‘‘سنگھ کے سربراہ نے مزید کہا، ’’تپسیا (تپسیا/جدوجہد) اور بہت سے لوگوں کی ’سمرپن‘ (لگن اور قربانیاں) اس کا باعث بنے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہندوستان کا قد گزشتہ چند سالوں میں عالمی سطح پر بلند ہوا ہے، اور اس کی وراثت اور ثقافت کو قبولیت مل رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہر شخص کی زندگی میں اچھی تبدیلیاں لانے کا وقت آ گیا ہے۔بھاگوت نے یہ بھی تبصرہ کیا کہ جو لوگ “اچھے دن” کے آنے پر خوشی کا تجربہ کرتے ہیں انہیں اس میں لگنے والی محنت کو دیکھنے کی ضرورت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا ’’ملک کی ترقی اور ترقی میں بہت محنت کی گئی ہے۔ بے لوث لوگ نتائج کے بارے میں سوچے بغیر محنت کرتے ہیں۔ وہ نتائج چاہتے ہیں حالانکہ وہ اپنی زندگی میں نہیں آئیں گے۔ ‘‘ انہوں نے کہا کہ نتائج کی خواہش کے بغیر سخت محنت کرنا ‘تپسیا’ ہے، اور یہ دیرپا خوشحالی اور خوشی لاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں