Download (15)

ایسے ملک کی تشکیل دینی ہوگی جہاں ہر عورت بااختیار ہو ۔ صدر مرمو

سٹارٹ اپس کے معاملے میں ہندوستان دنیا کا تیسرا بڑ ا ملک ۔ صدر جمہوریہ

سرینگر//دروپدی مرمو پریذیڈنٹ آف انڈیانے کہا کہ ہمیں ایک ایسے ہندوستان کی تعمیر کے لئے مل کر کام کرنے کا عزم کرنا چاہئے جہاں ہر عورت بااختیار ہو اور ہر نوجوان عورت اپنے خوابوں کو پورا کرنے کے لئے اعتماد کے ساتھ آگے بڑھے۔انہوںنے کہاکہ آج ہندوستان کے پاس تقریباً 1,17,000 اسٹارٹ اپس اور 100 سے زیادہ ایک یونیکورن کے ساتھ دنیا کا تیسرا سب سے بڑا اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم ہے۔وائس آف انڈیا کے مطابق صدر جمہوریہ محترمہ دروپدی مرمو نے آج راشٹرپتی بھون میں خواتین کے ایک گروپ کے ساتھ بات چیت کی جو معروف اسٹارٹ اپس اور یونیکورن کے بانی اور شریک بانی ہیں۔ یہ میٹنگ “عوام کے ساتھ صدر” کے اقدام کے تحت ہوئی جس کا مقصد لوگوں کے ساتھ گہرا تعلق قائم کرنا اور ان کے تعاون کو تسلیم کرنا ہے۔خواتین کاروباریوں کے ساتھ بات چیت کے دوران صدر جمہوریہ نے کہا کہ ان خواتین کاروباریوں نے ہندوستانی کاروباری ماحول کو بدل دیا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ’اسٹارٹ اپ انڈیا‘ پروگرام ہمارے نوجوانوں کی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے اور ملک میں کاروباری ماحول کو مضبوط بنانے کے مقصد سے شروع کیا گیا تھا۔ انہوں نے اس پروگرام کے مقصد کو حاصل کرنے میں انمول تعاون کرنے پر ان کی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ ان جیسے نوجوانوں کی اختراعی کوششوں کی وجہ سے، آج ہندوستان کے پاس تقریباً 1,17,000 اسٹارٹ اپس اور 100 سے زیادہ ایک یونیکورن کے ساتھ دنیا کا تیسرا سب سے بڑا اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم ہے۔صدر نے کہا کہ ان کا سفر اور کامیابیاں بطور کاروباری افراد لوگوں بالخصوص خواتین اور نوجوانوں کے لیے تحریک کا باعث ہیں۔ ٹیک اسٹارٹ اپس سے لے کر سماجی کاروباری اداروں تک، ان کا کام انٹرپرینیورشپ کی دنیا میں ہندوستانی خواتین کی صلاحیتوں کے متنوع جہتوں کے بارے میں ایک متاثر کن بصیرت فراہم کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کا تعاون صرف معاشی ترقی تک محدود نہیں ہے۔ انہوں نے روایتی رکاوٹوں کو توڑا ہے اور آنے والی نسلوں کو بااختیار بنانے کا راستہ دکھایا ہے۔ وہ ایک جامع معاشی مستقبل کے معمار ہیں جس میں ترقی کی راہ جنس کی بنیاد پر نہیں بلکہ ہنر اور خواہش کی بنیاد پر ہموار ہوتی ہے۔ صدر نے کہا کہ وہ صرف کاروباری رہنما نہیں ہیں۔ وہ تبدیلی کے علمبردار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بہت سی خواتین ایسی ہیں جو مالی طور پر خود مختار ہونے کا خواب دیکھتی ہیں لیکن انہیں یہ نہیں معلوم کہ اس مقصد کے حصول کے لیے انہیں کیا راستہ اختیار کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی کامیابی کا اثر پیدا ہونا چاہیے تاکہ ہم ملک کے تمام حصوں سے ایسی کامیابی کی کہانیاں سن سکیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں ایک ایسے ہندوستان کی تعمیر کے لئے مل کر کام کرنے کا عزم کرنا چاہئے جہاں ہر عورت بااختیار ہو اور ہر نوجوان عورت اپنے خوابوں کو پورا کرنے کے لئے اعتماد کے ساتھ آگے بڑھے۔ وہ لاکھوں نوجوان خواتین کے لیے رول ماڈل ہیں جو اپنی ترقی اور ترقی کا خواب دیکھنے کی ہمت رکھتی ہیں۔صدر نے خواتین کاروباریوں پر زور دیا کہ وہ دیگر کاروباری خواتین کی شناخت کریں اور انہیں بااختیار بنانے کے سفر میں ان کی مدد کرنے کے نئے طریقوں کے بارے میں سوچیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں