Download (15)

اوڑی میں مسافر گاڑی گہری کھائی میں جاگری

گاڑی میں سوار 7 افراد لقمہ اجل ، دیگر سات زخمی ، علاقے میں کہرام

سرینگر//اوڑی بارہمولہ میں سڑک کے ایک المناک حادثے میں کم سے کم 7 افراد لقمہ اجل بن گئے جبکہ اس حادثے میں مزید 7افراد زخمی ہوئے جس کے نتیجے میں علاقہ میں قیامت صغریٰ بپا ہوئی ۔ وائس آف انڈیا کے مطابق شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے بونیار اوڑی کے علاقے بوجتھلان تتمولہ بدھ کے روز ایک المناک سڑک حادثہ پیش آیا جس میں آٹھ افراد لقمہ اجل بن گئے ہیں ۔ ذرائع نے بتایا کہ ایک گاڑی جس کی نمبر JK05D 0946 تھی سڑک سے پھسل گئی اور آج دوپہر بجتھلان تتمولہ اڑی میں گہری کھائی میں جا گری جس سے کم از کم آٹھ افراد ہلاک اور سات دیگر زخمی ہو گئے جن میں تین کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔انہوںنے بتایاکہ سڑک حادثہ پیش آنے کے ساتھ ہی فوری طور پر ریسکیو آپریشن شروع کر دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ برف باری کی وجہ سے سڑک پھسلن ہو گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ زخمیوں کو علاج کے لیے جی ایم سی بارہمولہ منتقل کیا گیا ہے۔بلاک میڈیکل آفیسر بونیار اڑی ڈاکٹر خورشید احمد خان نے تصدیق کی کہ سات لاشیں بونیار پی ایچ سی میں ہیں اور آٹھ شدید زخمیوں کو جی ایم سی بارہمولہ ریفر کیا گیا ہے جن میں تین زخمیوں کی حالت زیادہ نازک ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ “ایک شدید زخمی بھی جی ایم سی بارہمولہ میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا جس سے مرنے والوں کی تعداد آٹھ ہو گئی۔اس ضمن میں آر ٹی او کشمیر سید شاہنواز بخاری نے کہا کہ انہوں نے ذاتی طور پر حادثے میں ملوث بدقسمت گاڑی کے رجسٹریشن نمبر JK05D 0946 کے دستاویزات کا معائنہ کیا جو مکمل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں نے تصدیق کی ہے کہ دستاویزات ہر لحاظ سے مکمل ہیں۔تاہم آر ٹی او نے اس بات پر زور دیا کہ اوور لوڈنگ کے حوالے سے قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی۔یہ واقعی ایک بدقسمتی اور المناک حادثہ ہے اورسنجیدہ معاملہ پر جس پر تحقیقات شروع کی جائے گی اور حادثہ کی وجوہات کا پتہ لگایا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ حکام اس واقعے کی مکمل تحقیقات کرنے اور کسی بھی خلاف ورزی کے لیے جوابدہی کو یقینی بنانے کے لیے پرعزم ہیں جو اس سانحے میں معاون ہو سکتی ہے۔آر ٹی او کشمیر سید شاہنواز بخاری نے انکشاف کیا کہ اوڑی کے المناک حادثے میں ملوث بدقسمت گاڑی کو جنوری کے مہینے میں اوور لوڈنگ پر پہلے ہی دو بار جرمانہ کیا جا چکا ہے۔ بار بار ہونے والے جرائم پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے، انہوں نے زور دے کر کہا، “اوور لوڈنگ کے لیے ڈرائیوروں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ یہ ہماری سڑکوں پر مسافروں کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے ٹریفک کے ضوابط کے سخت نفاذ کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔یہ انکشاف حفاظتی معیارات کی پابندی کے بارے میں سوالات اٹھاتا ہے اور مستقبل میں ایسے واقعات کی روک تھام کے لیے فعال اقدامات کی عجلت کو اجاگر کرتا ہے۔ چونکہ لوگ جانوں کے ضیاع پر سوگ منا رہے ہیں، زخمیوں کو طبی امداد اور متاثرہ خاندانوں کی مدد کے لیے کوششیں جاری ہیں۔ یہ واقعہ مستقبل میں اس طرح کے تباہ کن حادثات کو روکنے کے لیے روڈ سیفٹی کے ضوابط پر عمل کرنے کی اہمیت کی واضح یاد دہانی کا کام کرتا ہے۔دریں اثناء حادثہ کی جگہ ماتم کدے میں تبدیل ہوئی اور لوگوں کی بڑی تعداد نے وہاں پر بچائو کارروئیوں میں شرکت کی ۔ ادھر مرنے والوں کی شناخت کا کام جاری ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں