Img 20240312 Wa0108

استقبال ماہ رمضان المبارک

استقبال ماہ رمضان المبارک

تحریر و ترتیب: ملک ظہور مہدی

کسی کے آنے کی آمد عام طور پر خوشگوار ہوتی ہے اور اس کے استقبال کی تیاریاں بھی بڑے پیمانے پر کی جاتی ہیں۔ اب یہ الگ بات ہے کہ وہ آنے والا کون ہے اور اس کی تیاریاں کیسے کی جائیں۔ فی الوقت ہم رمضان المبارک کی بات کررہے ہیں اور اس کی آمد نہ صرف ایک مسلمان کے لیے بلکہ امت مسلمہ کے علاوہ دنیا کے ہر فرد کے لیے عالمی پیمانے پر خیر و برکت والی خبر ہوا کرتی ہے۔ ماہ رمضان نزولِ قرآن کا مہینہ ہے، تقویٰ، پرہیزگاری، ہمدردی، غمگساری، محبت و الفت، خیر خواہی، خدمتِ خلق، راہ خدا میں استقامت، جذبۂ حمیت اور جذبۂ اتحاد، پروردگار اور رسولؐ اکرم حضرت محمد ﷺ سے بےانتہا عشق لگانے اور کو اتباع کرنے کا مہینہ ہے، لہذا اس کے استقبال کے لیے ہمیں اپنے اندر ان ہی صفات کو پیدا کرنے کی تیاری کرنی ہوںگی، جن صفات کی طرف پروردگار کا مہینا ماہِ رمضان المبارک ہماری توجہ مبذول کرانا چاہتا ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ ماہ رمضان المبارک میں قرآن نازل ہوا، روزے فرض ہوئے، جنگ بدر پیش آئی، شبِ قدر رکھی گئی، فتح مکہ کا واقعہ پیش آیا، اس کے عشروں کو مخصوص اہمیت دی گئی، پھر اس ماہ میں زکوٰۃ، انفاق اور فطرے کا اہتمام کیا گیا نتیجتاً ماہِ رمضان المبارک کی عبادات کے درجات بہت زیادہ بلند کر دیے گئے۔ لہذااس ماہ مبارکہ کی حیثیت کے شایانِ شان کے مطابق ہی استقبال بھی کیا جائے گا۔ قبل اس سے کہ ماہ رمضان المبارک کی آمد ہو کیوں نہ ہم اپنے باطن و ظاہر کو اس ماہ مبارکہ کے لیے خود کو اپنے نفس کو تیار کر لیں۔ ظاہر و باطن کو پاک کرنے اور تیار کرنے میں اپنے آپ میں تقویٰ کی پرورش اختیار کریں اور روزہ جیسی عبادت کے لیے خود کو تیار کرکے اپنے نفس کے لیے مددگار ثابت ہو جائے۔ اسی لیے اللہ کے رسول محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ماہِ رمضان المبارک کے بعد سب سے زیادہ روزے ماہِ شعبان میں رکھے۔ یہی اس کے استقبال کا بہترین ذریعہ ہے.

*ماہ رمضان المبارک کے تین اہم واقعات:*
رمضان المبارک کے یہ تین واقعات ایسے ہیں جس نے دنیا کی صورتحال بالکل تبدیل کردی۔ یہ صحیح ہے کہ امت کی کامیابی مختلف ادوار میں پیش آنے والے واقعات کے پس منظر میں بنائی جانے والی حکمت عملی، پالیسی، لائحہ عمل اور تدابیر کو وضع کرنے کے نتیجہ میں ہی ہوسکتی ہے۔ لیکن یہ ابتدائی تین واقعات وہ مینارۂ نور ہیں جن کی روشنی میں یہ کام اس طرح ہو سکتا ہے کہ امت بحیثیت پوری امتِ مسلمہ اور مسلمان بحیثیت فرد، کامیابی سے ہمکنار ہوں۔ اور یہ کامیابی بھی اسی طرز عمل کو اختیار کرتے ہوئے ہوگی جو پہلے کے لوگوں نے اختیار کی ہے اور اس میں یہ واقعات ہماری بہترین رہنمائی کرتے ہیں۔

*پہلا واقعہ نزولِ قرآن ہے:*
واقعہ یہ ہے کہ قرآن نے حیاتِ انسانی کو جلا بخشی اور دنیا کو تاریکی، گمراہی اور شرک کی جڑوں سے نجات دلائی۔ لہذا ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم قرآن کو حتی الامکان سمجھنے کی کوشش کریں۔ نہ کہ خالی تلاوت کرنے پر محدود رکھیں، اس کو اپنی عملی زندگی کے شب و روز میں پیش آنے والے معاملات میں نافذ کریں۔ اس کے مطابق اپنی اور اپنے گھر والوں کی زندگیوں کو روشن بناتے رہے۔ قرآن پاک کے مبارک پیغام سے پیاسی روحوں کو تازگی عطا کریں۔ اس کے قیام کی سعی و جہد کریں اور اس کو وہ اہمیت دیں جو اس کا حق ادا کردے۔

*دوسرا واقعہ جنگ بدر ہے:*
یہ واقعہ اس حق و باطل کے فرق کو کھول کر رکھ دینے کا ہے جہاں حق کے علمبردار اس سعی و جہد میں اپنی تمام نعمتوں کو اللہ کے حوالے کردیتے ہیں، جو اس نے عطا کی ہیں۔ پروردگار نے انسان کو عقل دی ہے جو سب سے بڑی نعمت ہے۔ جس کے ذریعہ انسان اور حیوان میں فرق نمایاں ہوتا ہے۔ پروردگار نے انسان کو صلاحیتیں بخش دی ہیں جن کے ذریعہ خیر و فلاح کے کام انجام دیے جاتے ہیں۔ پروردگار نے انسان کو علم عطا کیا ہے جس کے ذریعہ جہالت، گمراہی اور نظریۂ ہائے افکار و نظریاتِ باطل سے چھٹکارا پایا اور دلایا جا سکتا ہے۔ پروردگار نے انسان کو مال و منال دیا ہے جو خدمتِ خلق اور انفاق فی سبیل اللہ کے کاموں میں استعمال کیا جا سکتا ہے۔ پروردگار نے انسان کو جان دی ہے جس کے ذریعہ نظامِ باطل کو زیر کیا جا سکتا ہے اور یہ آخری انتہا ہے لیکن یہ آخری انتہا سے قبل بہت سے وہ کام ہیں جن کا آغاز ہرشخص فرداً فرداً کر سکتا ہے لیکن پروردگار کی راہ میں جان دینے کا کام اجتماعی ہوگا اور یہ اُسی وقت ہوگا جب اس کا تقاضا ہو، فی الوقت اس کی ضرورت نہیں ہے۔ حاملِ قرآن جب قرآن پر عمل کرنے والے ہو جائیں گے تو ان کو وہی کامیابی میسر ہوگی جو ہمیشہ اور ہر دور میں مخالفین و معاندین کے مقابلے ہوتی رہی ہے۔

*تیسرا واقعہ فتحِ مبین ہے:*
یہ واقعہ اس بات کی روشن شہادت پیش کرتا ہے کہ حق کے علمبردار دنیا میں بھی سرخروئی حاصل کریں گے اور آخرت کی کامیابی تو ابدی ہے۔ یہ مبارک واقعہ اس بات کی بھی نشاندہی کرتا ہے کہ پروردگار کا گھر اور وہ مقام جو پروردگار کی عبادت کے لیے مختص کر لیا گیا ہو وہ شرک اور بت پرستی سے پاک رہنا چاہیے۔ یہ زمین پروردگار کی عبادت کے لیے مخصوص ہے لہذا اس میں باطل سے سودے بازی نہیں کی جا سکتی۔ یہ زمین وہ ہے جہاں پروردگار کے نام پاک لینے والے پروردگار کے آگے سربسجود ہوتے ہیں اور اس کی بڑائی اور کبریائی بیان کرتے ہیں، اس سے اپنی تمام توقعات وابستہ کرتے ہیں، اپنے گناہوں کی معافی طلب کرتے ہیں اور اسلامی نظام میں اجتماعیت کی روح پھونکتے ہیں۔ یہ عظیم واقعہ اس بات کی بھی نشاندہی کرتا ہے کہ مسلمان اگر دنیا میں کسی بھی مرحلے میں کامیابی حاصل کریں تو وہ مزید پروردگار کی بڑائی بیان کرنے والے بن جاتے ہیں، اس کی کمر غرور و تکبرکے محرکات سے اکڑتی نہیں ہے بلکہ مزید وہ پروردگار کے آگے جھک جانے والا بن جاتا ہے اور اس میں انسانوں سے مزید خیرخواہی کے جذبات ابھرتے ہیں۔

یہ تینوں واقعات انسان خصوصاً امت مسلمہ کو اس جانب متوجہ کرتے ہیں کہ قرآن کے استقبال میں اپنے باطن و ظاہر میں وہ محرکات پیدا کر لیے جائیں اور ان چیزوں پر ہم عمل پیرا ہو جائیں جن کے اختیار کے نتیجہ میں ہمیں کامیابی لازمی حاصل ہوگی، انشااللہ۔

یکسو ہو جائیے: آج اگر ہم یہ سمجھتے ہیں کہ اپنی بقا و تحفظ کے لیے ان اقدامات کی ضرورت ہے جو دنیا میں رواج پا چکے ہیں تو یہ نہ صرف ہماری کم عقلی ہوگی بلکہ دین کی تعلیمات سے دوری بھی نمایاں کرے گی۔ علمی میدان میں ترقی، معاشی میدان میں ترقی، عورتوں کی آزادی اور بالا دستی، صنعت و حرفت میں پیش قدمی، سائنس و ٹیکنالوجی میں دریافتیں، چاند اور مریخ پر کامیابی جیسے تمام نعروں میں اس وقت تک کوئی دم نہیں ہے جب تک کہ وہ اسلام کے سانچے میں نہ ڈھلے ہوئے ہوں۔

ہم دینی مدارس کھولتے ہیں، کلمہ اور نماز کی تبلیغ کرتے ہیں۔ فسق و فجور کے خلاف وعظ و تلقین کرتے ہیں۔ اور گمراہ فرقوں کے خلاف مورچے لگاتے ہیں۔ حاصل کیا ؟؟؟۔ حاصل یہ کہ بس جس رفتار سے دین مٹ رہا ہے اور مسلمانوں کی عملی زندگی سے دور ہوتا جا رہا ہے اس کے مٹنے میں ذرا سستی آجائے اور زندگی کو سانس لینے کے لیے ذرا کچھ دن اور مل جائیں لیکن یہ امید کبھی نہیں کی جا سکتی کہ پروردگار کا دین غالب آجائے یا پروردگار کا کلمہ عوام الناس کے دلوں کی دھڑکن بن جائے۔ پھر یہ خیال کہ موجودہ نظام تو ان ہی بنیادوں پر قائم رہے مگر اخلاق، معاشرت، معیشیت، نظم و نسق یا سیاست کی موجودہ خرابیوں میں سے کسی کی اصلاح ہو جائے گی، تو یہ بھی کسی تدبیر سے ممکن نہیں کیونکہ حقیقت یہ ہے کہ موجودہ نظامِ زندگی کی بنیادی خرابیوں کی آفریدہ اور پروردہ ہیں اور ہر خرابی کو دوسری بہت سی خرابیوں کا سہارا مل رہا ہے۔ ایسے حالات میں ایک جامع فساد کو رفع کرنے کے لیے جامع پروگرام ناگزیر ہے، جو جڑ سے لے کر شاخوں تک پورے توازن کے ساتھ اصلاح کا عمل جاری کرے۔

وہ کامل پروگرام کیا ہے؟ اس سے قبل یہ سوال اہم بن جائے کہ آپ فی الواقع چاہتے کیا ہیں؟ اس موقع پر ہم یہ بتا دینا چاہتے ہیں کہ یہ اسلام اور جاہلیت کا ملا جلا مرکب، جو اب تک ہمارا نظام حیات بنا ہوا ہے، زیادہ دیر تک نہیں چل سکتا۔ یہ اگر چلتا رہا تو دنیا میں بھی ہماری کامل تباہی کا موجب ہوگا اور آخرت میں بھی!

اب رہا یہ سوال کہ یکسو کیسے ہو جائے؟ اس کے لیے اس بات کا جائزہ لینا ضروری ہے کہ وہ کون سے لوگ ہیں جو اسلام کو حقیقی معنوں میں اختیار کرنے کے قائل ہیں اور کون ہیں جو فکرِاسلامی کو “مغربی اجتہاد” کی روشنی میں پسند کرتے ہیں۔ یعنی یہ کہ ایک گروہ، وہ ہو گا جو اسلام کو عالم انسانیت کی کامیابی، خیر و فلاح اور امن و سکون کا ذریعہ سمجھتے ہوئے فکرِ اسلامی کو زندگی کے ہر مرحلے میں قائم کرنے کا قائل ہے اور دوسرا گروہ وہ جو اسلام کو موجودہ زمانے میں قابلِ عمل نہیں سمجھتا اور چاہتا ہے کہ کچھ ترمیمات کے ساتھ اس کو اختیار کیا جائے تاکہ انسانوں کی خوشنودی حاصل کی جا سکے۔ جس کے نتیجے میں دنیا کی وہ ساری ترقیات حاصل ہو جائیں جو ایک مادہ پرست ذہن اور ایک مادہ پرست معاشرے کی چاہت ہیں۔ وہ لوگ جو اسلام کو اسلامی نظامِ حیات کی شکل میں نہ صرف اختیار کرتے ہیں بلکہ قائم بھی کرنا چاہتے ہیں ان کے لیے لازم ہوگا کہ اسلام اور غیر اسلام کی اس آمیزش کو جسے صدیوں کی ان ضعیف روایات نے پختہ کر رکھا ہے، تحلیل کریں اور قدامت کے اجزاء کو الگ کرکے خالص اسلام کے اس جوہر کو حاصل کرکے جو دین اسلام کی روح ہیں اور جو قرآن و سنت کے معیار پر جوہر نوراسلام ثابت ہو۔

ظاہر ہے کہ یہ گرانقدر وعمدہ کام ہمارے ان مومن صفات گروہوں کی مزاحمت کے بغیر نہیں ہو سکتا جو قدامت کے کسی نہ کسی جز کے ساتھ گہری وابستگی رکھتے ہیں۔ اس کے لیے یہ بھی ضروری ہے کہ ہم مغرب کی حقیقی تمدنی و علمی ترقیات کو اسکے فلسفۂ حیات اور انداز فکر اور اخلاق و معاشرت کی گمراہیوں سے الگ کر دیں اور پہلی چیز کو لے کر دوسری چیز کے بالکلیّہ اپنے ہاں سے خارج کر دیں۔ ظاہر ہے کہ اسے ہمارے وہ گروہ برداشت نہیں کر سکتے، جنہوں نے خالص مغربیت کو اسلام کے کسی نہ کسی مغربی ایڈیشن کو اپنا دین بنا رکھا ہے۔ اصلی دین کو الوداع کرکے نقلی دین کو اپنایا۔

امت مسلمہ کو چاہئے کہ اپنے گروہی و مسلکی اختلافات کو ختم کرتے ہوئے ایک جان ہوکر ہمہ گیر سیلاب کی مانند زندگی کے ہر شعبہ پر چھا جائیں۔ ٹھیک اسی طرح جس طرح مغربی تہذیب اٹھی اور چہار جانب چھاتی چلی گئی۔ اس سب کے لیے نہ صرف بلند حوصلوں کی ضرورت ہوگی بلکہ مضبوط سیرت اور صالح اخلاق اور مستحکم ارادے کے انسان درکار ہیں۔ سوال یہ ہے کہ کیا آپ خود کو اس گرانقدر حسینی تحریک کے لیے تیار پاتے ہیں یا پھر یہ کہ خود کو تیار کرنے کا حوصلہ رکھتے ہیں!! یہ وہ کام ہے جو بنا یکسوئی کے ہو ہی نہیں سکتا اور یہی ماہ رمضان المبارک کا پیغام ہے جس کا ہم استقبال کرنا چاہتے ہیں!

تطہیر فکر و خیال کا عمل: انسان جب کسی کا غلام ہو جائے تو اس کے لیے لازم آتا ہے کہ اس کی غلامی کو دور کر دیا جائے۔ انسان جسمانی اور عقلی بنیادوں پر آزاد پیدا کیا گیا ہے اور ساتھ ہی وہ پروردگار کا بندہ بھی ہے۔ لہذا اس کے جسم اور اس کی فکر کو ہر اس غلامی سے نجات دلانا اولین فرض ہے جس کی غلامی میں وہ رہ کر غورو فکر اور عمل کرتا ہے۔ تطہیرِ فکر و خیال یہ عمل انسان کے لیے ہر طرح کی نفسیاتی غلامی کے خاتمے کا عمل ہے۔ یہ عمل انہی افراد کو نفسیاتی غلامی سے آزاد کر سکتا ہے جس میں آزادی کی خواہش پائی جاتی ہو۔ جس شخص میں یہ پوٹینشل نہ ہو اسے آزاد کروانا بہت مشکل ہے۔ آزاد ہونے کے پوٹینشل کے معنی یہ ہیں کہ کسی ایسے شخص میں جو عارضی طور پر نفسیاتی غلامی کا شکار ہو چکا ہو اور اس میں کچھ خصوصیات پائی جاتی ہوں.

1۔ اس شخص میں حق پرستی کے لیے ایک خاص حمیت اور غیرت پائی جاتی ہو۔ وہ حق سے وابستہ رہنا چاہتا ہو۔ وہ کسی فکر سے وابستہ صرف اس لیے ہوا ہوکہ یہ فکر اس کے خیال میں “حق” ہو۔

2 ۔ وہ شخص اپنے ذہن میں اٹھنے والے سوالات کے جواب تلاش کرنا چاہتا ہو۔ اس کے برعکس وہ شخص جو مکمل طور پر ذہنی غلام ہے وہ اپنے ذہن میں اٹھنے والے سوالات کے جواب تلاش کرنے کی زحمت نہیں کرتا۔ وہ بیک وقت متضاد باتوں کو مانتا رہتا ہے اور اپنے ذہن کو مختلف خانوں میں بانٹ کر رکھتا ہے۔ اگر اس کے ذہن میں کوئی سوال پیدا ہو تو اسے شیطان کا وسوسہ سمجھ کر نظر انداز کر دیتا ہے۔

3۔ اس شخص کے لیے اپنے افکار میں تضاد قابل برداشت نہ ہو۔ مثال کے طور پر وہ یہ نہ مان سکتا ہو کہ کوئی چیز ایک ہی وقت میں بالکل سیاہ اور بالکل سفید بھی ہو سکتی ہے۔

عملی زندگی میں اس کی مثال یہ ہے کہ اس کے لیے یہ ماننا بہت مشکل ہو کہ اس کے راہنما میں کوئی اخلاقی خرابی بھی پائی جاتی ہے۔ اور اس کے باوجود اسے اپنے راہنما کی پیروی کرنا چاہیے۔ جس شخص میں آزاد ہونے کا یہ پوٹینشل پایا جائے اس کا نفسیاتی غلامی سے آزاد ہونا ممکن ہے۔ اس کی عملی صورت عام طور پر یہ ہوتی ہے کہ اس شخص کے ساتھ کوئی ایسا واقعہ یا حادثہ پیش آجاتا ہے جس کی وجہ سے اس کے ذہن میں کئی ایک تضاد پیدا ہوئے ہوں۔ تضاد کی یہ کیفیت اس کے لیے ناقابل برداشت ہوتی ہے۔ وہ اس تضاد کو حل کرنے کی کوشش کرتا ہے اور جب اس میں ناکام رہتا ہے تو وہ فکری غلامی سے آزاد ہو جاتا ہے۔ اس بات کی مثال اس طرح سمجھیں کہ ایک عقیدت میں مبتلا انسان اپنے ہی جیسے انسان کو جس کا وہ مرید ہے ہر برائی سے پاک سمجھنے لگتا ہے لیکن جب کوئی ایسا واقعہ مرید اور پیر کے درمیان رونما ہو جائے جس کی زد میں مرید کی ذات خود نقصان کا ذریعہ بنے۔ اُس مرحلے میں راہنما یا پیر جس پر اب تک اعتماد قائم تھا وہ باقی نہیں رہتا ۔پھر جب وہ اپنے پیر کی ایک غلطی کو پہچان لیتا ہے اور تقابلی عمل سے گزرتا ہے تو محسوس کرتا ہے کہ جس شخص، فکر اور نظریہ کا اس پر اب تک غلبہ تھا وہ بےشمار غلطیوں میں ملوث ہے۔ بس یہ واقفیت ہی وہ نقطۂ آغاز ہوتا ہے ایسے شخص کی گرہیں کھولنے کے لیے جس کے نتیجہ میں پرانے تحریفات اور تصورات کی شکست و ریخت کا عمل شروع ہوجاتا ہے۔ نتیجتاً پرانے تصورات کی جگہ نئے تصورات پیدا ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔ اس عمل کے ذریعہ ایسا شخص کچھ ہی عرصے میں نفسیاتی غلامی سے آزادی حاصل کرلیتا ہے۔ اس عمل کے اختتام پر انسان اپنے بہت سے سابقہ تصورات سے دست بردار ہو جاتا ہے۔ اس کی جگہ نئے تصورات قائم ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔ پرانے دوستوں سے رشتے ٹوٹنے لگتے ہیں اور نئے دوستوں کے ساتھ رشتے استوار ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔ پرانی اقدار ایک ایک کرکے بکھر تی چلی جاتی ہیں اور نئی اقدار جنم لینے لگتی ہیں۔ مختلف واقعات کی توجیہ کرنے کا پرانا طریقہ ختم ہوتا چلا جاتا ہے اور اب واقعات کو نئے تناظر میں دیکھا جانے لگتا ہے۔ آج امت مسلمہ کے نام نہاد مفکرین کو بھی نفسیاتی آزادی کے اِس عمل سے گزارنے کی ضرورت ہے کہ جس کے نتیجہ میں خصوصاً مغربی اور عموماً تمام باطل عقائد اور افکار و نظریات سے نجات کی ضرورت ہے کہ جس کے بعد دین اسلام کے حقیقی نظریۂ حیات کو سمجھ سکیں۔ وہ خود بھی یہ جان سکیں اور پروردگار کی دی ہوئی صلاحیتوں اور نعمتوں کو استعمال کرتے ہوئے بتا سکیں کہ دین اسلام امن و محبت، الفت و بھائی چارگی، ہمدردی و خیر خواہی اور دنیا و آخرت میں نجات دلانے والا راہ ہے ساتھ ہی مذہبِ اسلام عالمِ انسانیت کی کامیابی و سرخروئی کا پیش خیمہ ہے۔ اس مبارک مہینہ میں اسی منظور نظر عمل سے امت کے ہرفرد کو گزارا جاتا ہے۔ لہذا ماہِ رمضان المبارک کا استقبال کرتے ہوئے اپنی ذات کو اس عمل سے گزارنے کے لیے بھی تیار کرلینا چاہیے اور یہی وہ بہترین استقبال ہوگا جو ماہ رمضان المبارک کے گذارنے کے بعد ہماری سابقہ زندگیوں کے شب و روز کو مکمل طور پر تبدیل کرکے روشن مستقبل بنا دیگا۔ پھر یہی تبدیلی ہماری نجات کا ذریعہ ثابت ہوگی، انشااللہ۔ اور یہ عمل نفسیاتی آزادی کا عمل اور تطہیرِ فکر و خیال کا عمل ان لوگوں کے بس میں ہے جو داعئ الخیر کی ذمہ داری انجام دیتے ہیں۔

لہذا وقت کا تقاضا بھی ہے اور ہم پرلازم بھی ہے کہ ہم اور آپ داعئ حق بن جائیں، لیکن داعی حق کے لیے ضروری ہے کہ وہ غیر ضروری بحث و مناظرے سے بچے۔ اور دین کے بہت سے پرجوش داعی، احیاء دین اسلام کے وہ تمام راز و صفات، علمی واقعات، معنی خیز بحث و مباحثوں میں اپنی موجودگی کو یقینی بنائے تاکہ آپ کا قلب و ذہن اصلی دین اسلام کے نقطۂ نظر کو قبول کر لے اور داعی حق کے لیے اپنی نیت میں اخلاص پیدا کرنا لازمی امر ہے اس کو اپنے آپ میں پیدا کریں۔ اس دعوت کا مقصد کسی شخص کو گھیر گھار کر اپنے نقطۂ نظر پر قائل یا لاجواب کرنا ہرگز نہیں ہونا چاہیے۔ داعی کو کبھی بھی جلد بازی کا مظاہرہ نہیں کرنا چاہیے، اور نہ ہی اپنے مخاطب یا اس کے راہنما کو ڈائریکٹ تنقید کا نشانہ بنانا چاہیے جس کے نتیجہ میں ضد پیدا ہونے کا امکان ہو،کیونکہ ضد، انانیت اور ہٹ دھرمی، کبھی سیدھے راستے کی راہنمائی نہیں کر سکتے۔ لہذا ماہ رمضان المبارک کا استقبال ہمیں اس طرح کرنا چاہیے کہ ہم پر یہ واضح ہو جائے کہ “حق آگیا اور باطل مٹ گیا اور باطل تو مٹنے ہی کے لیے ہے”(بنی اسرائیل:۸۱) اور ساتھ ہی یہ بھی کہ :”اور حق کو باطل کے ساتھ نہ ملاؤ اور سچی بات کو جان بوجھ کر نہ چھپاؤ”(البقرہ:۴۲)۔

استقبالِ رمضان: ماہِ مبارکہ رمضان کا استقبال کریں اپنے قول سے، اپنے عمل سے، اسلامی نظریۂ حیات کو عام کر کے اور ان طریقوں کو اختیار کرکے جو ہم پر لازم آتے ہیں۔ استقبال کریں ماہِ مبارکہ رمضان کا اس عہد و پیمان کے ساتھ جس کے نتیجہ میں ہماری زندگیاں نہ صرف ہمارے متعلقین کے لیے بلکہ عوام الناس کے لیے بھی سودمند ثابت ہوں۔ استقبال کریں ماہ مبارکہ رمضان کا اس طرح کہ یہ استقبال امت مسلمہ کے عروج کا ذریعہ بن جائے کیونکہ پروردگار کے رسول نے خود یہ مژدہ سنایا تھا کہ اگر تم نے میری دعوت مان لی تو تم عرب و عجم دونوں کے مالک بن جاؤ گے اور استقبال کریں ہر اس عبادت پر جو عمل کے لیے یقینی ہو اور جس کے ذریعہ ہمیں پروردگار کی محبت و الفت اور قرب حاصل ہوجائے۔ سلمان فارسیؓ سے روایت ہے انہوں نے کہا کہ شعبان کی آخری تاریخ کو نبی کریم ؐ نے خطبہ دیا جس میں فرمایا:” اے لوگو! ایک بڑی عظمت والا، بڑی برکت والا مہینہ قریب آگیا ہے۔ وہ ایسا مہینہ ہے جس کی ایک رات ہزار مہینوں سے بہتر ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اس مہینہ میں روزہ رکھنا فرض قرار دیا ہے اور جو شخص اس مہینہ میں کوئی ایک نیک کام اپنے دل کی خوشی سے بطور خود کرے گا تو وہ ایسا ہوگا جیسے کہ ماہ مبارکہ رمضان کے سوا اور مہینوں میں فرض ادا کیا ہو اور جو اس مہینہ میں فرض ادا کرے گا تو وہ ایسا ہوگا جیسے ماہ مبارکہ رمضان کے علاوہ دوسرے مہینہ میں کسی نے ستّر (70) فرض ادا کیے اور یہ صبر کا مہینہ ہے اور صبر کا بدلہ جنت ہے اور یہ مبارک مہینہ معاشرے کے غریب اور حاجتمندوں کے ساتھ مالی ہمدردی کا مہینہ ہے۔ یہ وہ عبادات ہیں جن کو اختیار کرنا ہر مسلمان کے لیے لازم ہے۔ لہذا یہ عبادات ہمارے ظاہر و باطن کو تبدیل کردیں اسی کے لیے اپنے فکر و خیال کو تیار کرلینا ہے ۔ آپ یوں سمجھئے کہ یہی استقبال ماہ مبارکہ رمضان ہے اور یہی ہے انسان حضوصا امت مسلمہ کا منزلِ مقصود، روشن مستقبل اور حاصل دنیا و آخرت۔ پروردگار عالمین ہم سب کو ماہ مبارک رمضان کے مقدس ہدایات پر عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرمائیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں